چادر : فریدہ غلام محمد

وہ کھانا لگا ہی رہی تھیں جب گیٹ کی گھنٹی بجی۔

’’یہ ھو نہ ھو سسی ھے توبہ زرا جو صبر کر جائے‘‘ ۔رمضان بھی چھٹی پر تھا ورنہ یہ نوبت ہی نہیں آتی ۔۔۔ولید سویا ھوا تھا ۔۔۔۔۔۔ بڑبڑاتے ھوئے انھوں نے گیٹ کا چھوٹا دروازہ کھولا ۔وہ سرخ چہرے کے ساتھ اندر داخل ھوئی ۔۔۔ ’’امی پتہ بھی ھے کب سے کھڑی ھوں‘‘ ۔

انھیں بےساختہ اس پر پیار آگیا ۔ اچھا آ جاؤ اب ۔

’’میں ولی کو جان سے مار دوں گی کہہ رہا تھا وہ لینے آ جائے گا ۔یہ دیکھیں گاڑی انڈے دے رہی ھے اور خود سویا ھوا ھو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔‘‘

اس کا غصہ ختم ہی نہیں ھو رہا تھا اچھا چلو تازہ دم ھو کر آؤ ۔ کھانا لگا دیا ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ۔۔۔۔۔۔منہ ہاتھ دھو کر آئی تو جی جان سے جل گئی ۔۔۔ولی اس سکون سے کھانا کھا رہا تھا جیسے کچھ ھوا ہی نہیں ۔

’’لو جی ۔۔۔۔۔۔۔یہاں تو سکون سے کھانا کھایا جا رہا ھے‘‘ ۔۔۔۔کرسی گھسیٹ کر بیٹھ گئی ۔۔ نہیں تو تمہاری طرح شور کر کے گھر سر پر اٹھا لوں ۔۔۔اس نے اک نظر اسے دیکھا ۔۔ سنہری رنگت والی یہ کزن اسے بہت عزیز تھی ۔۔۔۔۔           ’’وٹ؟ ولی کوئی شرم نام کی بھی شے ھوتی ھے ۔۔۔۔ پھر ؟‘‘

پھر یہ کے تم کو آنا تھا لینے ۔۔۔۔ اپنا موبائل دیکھ لیتی ۔۔۔ میسج کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ آج دفتر میں کافی کام ھے تم آجانا ۔۔۔۔۔۔۔مجھے کیا پتہ کہ دلہن کی مہندی کی سجاوٹ نہیں شاید پوری مہندی فنکشن دیکھنے بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔ وہ اب پلیٹ میں چاول ڈال رہا تھا ۔۔۔۔ مجھے تم سے بحث نہیں کرنی ۔۔۔۔۔اس نے منہ بسورا گڈ۔ وہ مسکرایا۔۔۔۔ امی نے بھی سکھ کا سانس لیا ۔۔۔۔۔۔سسی انٹیریئر ڈیکوریشن کے کئی کورس کر چکی تھی ۔۔۔۔اس کے بابا یورپ میں ہی تھے ۔۔۔۔۔۔کبھی کبھار گھر کا چکر لگاتے تھے ۔۔۔۔وہاں اپنی دوسری بیوی اور بچوں کے ساتھ تھے ۔۔۔۔ولید ان کی بہن کا بیٹا تھا ۔بچپن ہی سے ۔۔۔ انھوں نےگود لے لیا تھا ۔۔۔۔۔۔اپنا کاروبار کر رہا تھا ۔۔ اچھی تعلیم تھی۔۔۔۔۔۔وہ اور ان کی نانو تو یہ ہی چاہتی تھیں کہ ان دونوں کا ہی رشتہ کر دیا جائے مگر ایک مشرق دوسرا مغرب ۔

اس دن وہ فارغ تھی ۔۔۔۔۔۔نانو سے باتیں کر لیں ۔۔۔۔امی کو وقت دے لیا لیکن وہی اصرار آخر ولی میں کیا برائی ھے ۔۔میرے کچھ خواب ہیں اور نانو اس میں ولی نہیں ھے وہ بہت اچھا ھے مگر میرا ایک آئیڈیل ھے جب مل جائے گا کر لوں گی شادی۔۔۔وہ نروٹھی سی باہر نکل آئی ۔۔۔۔ہر بار ایک ہی بات ۔۔۔۔پتہ نہیں یہ ولی کب آئے گا۔۔۔ عصر کا وقت تھا ۔وہ باہر ہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب اسکی گاڑی رکی ۔۔۔۔۔ولی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔دراز قد تھا ۔۔۔ خوش شکل تھا ۔۔۔۔۔خوش لباس بھی تھا مگر ۔۔۔۔۔۔۔اسکے خوابوں کا شہزادہ ایسا بالکل نہیں تھا۔۔۔۔ارے آپ آج گھر میں تشریف فرما ہیں ۔۔۔۔۔۔۔آواز بھی اچھی تھی لیکن وہ بات نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔یہ میں کیوں سوچ رہی ھوں بھلا ۔۔۔۔۔ اس نے سوچوں کو ذہن سے بےدخل کیا ۔۔۔۔اوہ سسی ۔۔وہ اب سر پر کھڑا تھا ۔۔۔۔ ۔وہ فیصلہ کر چکی تھی ولی سے بات کرنے کا۔

’’ولی تم چائے پیو گے؟‘‘۔۔ ارے واہ نیکی اور پوچھ پوچھ ۔۔۔ ساتھ کچھ اور بھی مل جائے تو۔۔۔۔۔ ہاں لاتی ھوں۔ آج تو موڈ ٹھیک تھا ۔۔۔۔۔وہ جب تک تازہ دم ھو کر لان میں آیا ۔۔۔۔وہ چائے ،کیک اور کباب بنا کے لے آئی۔ شکریہ ۔۔۔۔۔۔۔جب تک اس نے چائے ڈالی ۔۔۔۔۔۔وہ ایک کباب کھا چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سسی کچھ چپ سی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی بات ھوئی ھے کیا؟ اس نے اسے غور سے دیکھا ۔۔۔ اس نے اثبات میں سر ہلانے پر ہی اکتفا کیا ۔۔۔۔اب وہ بھی بتا دو ۔۔۔ اس نے موسم دیکھا ۔۔۔۔ ہلکی ٹھنڈی ھوا ۔۔۔۔ ڈھلتی شام ۔۔۔۔۔۔۔جتنی دیر میں خالہ اور نانو سے ملا ۔۔۔عصر سے شام ھو چلی تھی ۔۔۔ سہانی شام ۔۔۔۔۔ اب ادھر ادھر کیوں دیکھ رہے ھو ؟اوہ سوری کیا تم کو دیکھوں ۔۔۔۔ اب وہ چھیڑ رہا تھا وہ جانتی تھی ۔

’’ولی ۔۔۔آج نانو اور امی نے کہا کہ میرے لئے تم موزوں ھو ۔‘‘

ہیں موزوں۔۔۔۔۔ مطلب تم کو پک اور ڈراپ میں کروں ۔۔ولی نے بےساختہ کہا ۔

’’نہیں شادی کے لئے‘‘

اب آواز دھیمی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ تو تم نے بتانا تھا میں تمہارے خوابوں کا شہزادہ نہیں ھوں ۔۔۔۔۔۔بلکہ فہد ھے ۔۔۔ وہ اب سکون سے چائے پی رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ولی میں خود سے کیسے کہوں ۔۔اوکے سمجھ گیا ۔۔۔میں کر لوں گا۔۔۔۔۔۔وہ ہمارے ماموں کا بیٹا ھے اور پھر تم کو وہ اپنا آئیڈیل لگا ۔۔۔۔۔گریس فل ھے،بہت عمدہ ھے ،کیا گھمبیر آواز ھے ۔۔۔۔۔۔۔        ’’مذاق اڑایا میرا ۔‘‘

نہیں بابا ۔۔۔۔سوچ رہا ھوں نانو کو کیسے منانا ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھو صاف نیت سے سمجھانا ۔۔اس کی آواز۔ میں نجانے کیا تھا کہ ایک دم اسکا رنگ بدلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھو ۔۔۔ اگر اعتبار ھے تو کہتا ھوں ۔۔۔۔اور یہ بات تم جانتی ھو۔۔۔ میں تم سے محبت کرتا ھوں ۔۔ میری زندگی تمہارے ہی گرد گھومتی ھے ۔۔۔بالکل ایسے جیسے زمین ،سورج کے گرد گھومتی ھے۔۔۔۔مگر میں یہ قبول کر چکا ھوں کہ میں تمہیں پسند نہیں ۔۔۔۔۔ تم کو میری اس کالی چادر سے بھی چڑ ھے کہ یہ لے کے پینڈو لگتا ھوں ۔۔۔۔۔ میں ڈیشنگ نہیں ھوں ۔۔۔۔۔اس کے بعد کیا میں وہاں کچھ اور کہوں گا ۔۔۔ اس کے لہجے میں دکھ تھا ،چہرے پر تناؤ ۔۔۔۔۔سسی کو ندامت سی ھوئی ۔

’’سوری ولی ‘‘

جاو معاف کیا ۔۔۔وہ ہلکا سا مسکرایا ۔۔۔۔۔ اور نانو کے کمرے کی طرف چلا گیا۔
ایک ہی ہفتہ میں ولی نے نجانے کیا جادو کیا۔۔ کہ فہد کو یورپ سے بلوا لیا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔منگنی کی رسم طے پا گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مبارک ھو جی کل آ رہے ہیں ساجن جی تمہارے ۔۔۔۔۔۔۔ وہ اسکے ساتھ ا کر ریلنگ پر ہی کھڑا ھو گیا ۔۔۔ اس کی چادر کی بھینی بھینی سی خوشبو جو اسے زہر لگتی تھی۔۔۔۔ آج اس نے ناک بھوں نہیں چڑھائی ۔۔۔ خیر مبارک ۔۔ دیکھو ۔۔۔۔سسی اس کے ساتھ بڑی تمیز سے رہنا اور جب تک شادی نہ ھو جائے زیادہ فری نہیں ھونا ۔۔۔۔۔۔وہ بڑا بن کر سمجھا رہا تھا ۔۔۔۔اچھا ٹھیک ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے آج خوشی خوشی جواب دیا ۔۔اس خوشی میں اسے یہ بھی پتہ نہیں چلا کہ وہ اب وہاں سے جا چکا ھے۔

منگنی والے دن تو سسی حسن و جمال کا پیکر لگ رہی تھی ۔۔۔۔اسکی سہلیاں سیڑھیوں سے نیچے لا رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹی پنک پشواز میں غصب ڈھا رہی تھی ۔۔۔۔خرد والا بھی مخمصے میں پڑ جائے،پروانہ جل جائے ،ولی نے اسے آنکھ بھر کے دیکھا ۔۔۔۔۔دل کو کسی نے مسل ڈالا جیسے۔۔۔وہ وہاں سے ہٹ گیا۔۔۔۔۔۔مبارک ھو خالہ جان چاند سورج کی جوڑی ھے ماشااللہ۔۔ ایسے کئی فقرے تھے جو اس نے سنے ۔

فہد مسکرا رہا تھا۔۔۔۔۔ ہر طرح سے سسی کے قابل ۔۔۔ منگنی کی رسم ادا ھوئی تو وہ خاموشی سے کمرے میں چلا آیا ۔۔۔۔۔۔۔رات گئے تک ہنگامہ چلتا رہا ۔۔۔۔ سسی نے تھک ہار کر جب کمرے میں قدم رکھا تو اسے احساس ھوا کہ ولی نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔اس نے ایک دم اسکے کمرے میں قدم رکھا ۔۔۔زیرو بلب کی ہلکی سی روشنی میں وہ سو رہا تھا شاید۔۔۔۔۔ولی ۔۔۔۔اس نے ہلکی آواز میں پکارا تو اس نے آنکھوں سے بازو ہٹایا۔۔۔۔۔وہ اسکے سامنے تھی ۔۔۔۔۔۔سہانے روپ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ذرا سی شرمائی ھوئی ۔۔۔۔۔۔آنکھوں میں انبساط کی لہریں ۔۔چاند سے اتری اس شہزادی کی طرح جس کی کہانی نانو سناتی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔ سوہنی لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔کوئی مقناطیسی قوت اسے دیکھنے پر مجبور کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔کچھ دن بعد وہ غیر ھو جائے گی تو بھی ولی جینا ھو گا ،محبت میں شرط نہیں ھوتی جس میں شرط ھو وہ محبت نہیں ھوتی ۔

’’ارے کیا ھوا تمہیں‘‘ ۔۔۔۔۔ ساری محفل میں تم نہیں تھے ۔۔۔۔۔اور اچانک بجلی چلی گئی ۔۔۔۔۔گھپ اندھیرا ۔۔۔۔۔۔ ڈرنا نہیں ٹھہرو میں موبائل کی لائٹ آن کرتا ھوں تم جا کر دوسرا سوئچ آن کرو شاباش ۔۔۔۔۔ وہ جانتا تھا اسے اندھیرے سے ڈر لگتا ہے ۔۔۔اس نے لائٹ آن کی تو وہ جا کر سوئچ آن کر آئی ۔۔۔۔۔۔۔توبہ وہ اس کے پاس ہی بیٹھ گئی ۔

’’کیا بات ھے سسی ۔۔۔۔۔اب تو پنوں بھی مل گیا ۔۔۔اب کیا ڈھونڈ رہی ھو‘‘ ۔۔۔۔۔اس نے سائیڈ پر پڑی چادر اپنے اردگرد لپیٹی ۔۔۔۔سوری مگر ذرا بخار ھے اس نے چادر اوڑھنے کی وجہ بتائی تب وہ چونکی اسکی آنکھیں لال انگارہ بنی ھوئی تھیں میں امی کے ہاتھ گرم دودھ اور میڈیسن بھیجتی ھوں کھا کر سو جانا ۔۔۔۔۔اچھا اس نے بازو پھر آنکھوں پر رکھ لیا تھا
فہد صرف ہفتے کے لئے ہی آیا تھا ۔۔۔ روز ہی ملتی تھی وہ ۔۔۔۔ ممانی روز اسے گھر آنے کا کہتیں تو امی بول پڑتیں ۔۔ارے فہمیدہ اب وہاں ہی جانا ھے اس نے خیر سے ۔۔۔۔۔۔بات آئی گئی ھو جاتی۔۔۔۔۔۔۔وہ رات گئے فہد سے بات کرتی رہتی ۔۔۔ولی نے پانچ دنوں سے اسے کھانے کی میز پر نہیں دیکھاتھا ۔۔۔۔۔۔۔اس روز موسم کافی ابر آلود تھا ۔۔۔۔۔۔فہد آ گیا ۔۔۔۔۔آنٹی امی کی بڑی خواہش ھے کہ آج سسی اپنے گھر آئے کل میری فلائیٹ بھی ھے ۔۔۔۔۔۔ولی کمرے سے نکلا تو اس کی بات پر چونک گیا ۔۔وہ سیڑھیوں پر ہی رک گیا۔۔۔۔۔ لے جاؤ اسے میں بلاتی ھوں ۔۔۔۔۔ارے ولی تم آ ہی رہے ھو تو سسی کو پیغام دے دو ۔۔۔۔۔جی اچھا۔۔۔۔۔۔ سسی وہ کمرے میں داخل ھوا تو حیرت اس کی منتظر تھی وہ تو پہلے سے ہی تیار تھی شاید دونوں نے پروگرام بنایا ھوا تھا ۔؟۔

’’فہد بھائی آئے ہیں تمہیں لینے ‘‘۔۔۔۔یہ کہہ کر رکا نہیں ۔۔۔دونوں روانہ ھو گئے۔۔۔۔۔۔۔کچھ دیر تو وہ بےچین پھرتا رہا ۔۔۔پھر اس نے ممانی کو کال کی ۔۔۔۔۔۔۔کہاں ہیں آپ ممانی جان ۔۔۔۔بیٹا میں ذرا اسلام آباد آئی ھوئی ھوں شاپنگ کے سلسلے میں ۔’’اچھا یوں کریں جہاں ہیں وہیں سے ذرا گھر واپس آئیں‘‘

کال کاٹ کر اس نے خالہ کا ہاتھ تھاما۔۔۔۔۔۔اور گاڑی میں بٹھا کے اتنی تیز چلائی کہ وہ بول اٹھیں ۔۔۔۔ ’’کیا ھو گیا ھے بیٹے‘‘ ۔۔۔۔۔خاموش رہیں خالہ پلیز۔۔۔۔۔۔۔ فہد کے گھر کے باہر ہی گاڑی روک دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جلدی سے گھر میں داخل ھوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سسی بھاگتی ھوئی لاوئج کی طرف جا رہی تھی مگر فہد نے اسے پکڑ رکھا تھا۔۔۔۔۔۔چھوڑ دو ۔۔مجھے خدارا۔ ابھی ہماری شادی نہیں ھوئی فہد ۔۔۔کیا ھوا وہ بھی ھو جائے گی ۔۔۔ مکروہ ہنسی ۔۔۔۔۔۔نہیں اس کے ہاتھ سے نکلی تو کسی سے بری طرح ٹکرائی ۔۔۔۔۔اس نے سر اٹھایا ہی نہیں وہ اسکو خوشبو سے پہنچاتی تھی ۔

’’یہ کیا بےغیرتی ھے فہد ‘‘۔۔۔۔ وہ غرایا ۔۔۔۔فہد تو اسے دیکھ کر زرد ھو گیا ۔۔۔۔خالہ ممانی آ جائیں۔۔۔۔۔۔اس نے جلدی سے اسکے پھٹے کپڑوں پر اپنی چادر ڈال دی ۔۔۔۔۔۔ ممانی کا زناٹے دار تھپڑ اس کے منہ پر پڑا ۔۔۔۔۔ وہ رو رہی تھی ۔۔۔۔۔امی نے اسکو گاڑی میں بٹھایا ۔۔۔۔ولی ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھ چکا تھا ۔
اگلے ہی روز ماموں،ممانی اور فہد آ گئے ۔۔۔۔۔۔۔ولی اسی وقت آفس سے آیا تھا ،نانو نے اسے اشارہ کیا تو وہ بھی وہیں آگیا ۔۔۔۔۔۔۔سسی ،امی کے ساتھ آ گئی ۔۔۔۔۔۔پہلی بار ولی نے اسے دیکھا وہ بالکل زرد تھی ،لاغر سی تھی۔ ہم شرمندہ ہیں پلیز اسے معاف کر دیجئے۔ماموں جان کی آواز گونجی ۔۔۔۔۔۔۔اس سے پہلے کوئی بولتا وہ ایک دم کھڑی ھو گئی ۔

’’یہ رہی منگنی کی انگوٹھی‘‘۔

ہوش میں آؤ لڑکی۔۔۔۔ ممانی جان غصے میں بولی ۔

’’جی اب ہی تو ہوش میں آئی ھوں ۔۔۔۔ہیرا میرے گھر تھا اور میں ایک معمولی پتھر کو قیمتی سمجھتی رہی ۔یہ چادر دیکھ رہے ہیں آپ سب ۔۔۔۔یہ ولی نے مجھے اس وقت دی جب آپ کے بیٹے نے میرا دوپٹہ نوچ ڈالا ۔۔۔۔۔ آئیڈیل کچھ نہیں ھوتا ۔۔۔۔میں خوفناک خواب سے جاگ گئی ھوں ،اب خوبصورت حقیقت میرے سامنے ھے اس نے ولی کو دیکھا اس کی آنکھوں میں عزت تھی،محبت تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ولی مسکرا دیا ۔۔۔۔ وہ چادر اس نے ابھی تک لپیٹ رکھی تھی ۔۔ خواب اور حقیقت میں جتنا بھی فاصلہ تھا وہ اب طے ھو چکا تھا ۔۔۔۔

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post