Browsing Category

سلسہ جات

ایک تھی بستی کالاباغ (۵)

از: حمید قیصر دوسری صبح جب آنکھ کھلی تو اباجی نے اپنے ایک دوست کا والہانہ تعارف کروایا۔ ’’ پتر یہ ہیں میرے…

ایک تھی بستی کالاباغ (۴)

از: حمید قیصر چھیا کے ابا کے آنے کی خبر پاکر ماں جی کے چہرے پر بھی سکون کی ایک لہرسی دوڑ گئی۔ یوں جیسے ہم سب کے…

ایک تھی بستی کالا باغ (۳)

از: حمید قیصر ’’ اوئے! دریا پہ چلنا ہے تو جلدی اٹھ میں جارہا ہوں‘‘ اتوار کی صبح ابھی میں چادر تانے سو رہا تھا کہ…

ایک تھی بستی کالاباغ (۲)

از: حمید قیصر چودہویں کی رات اور نیم شب تاروں بھرے آسماں پر فقط چاند کا راج ہے۔ میں اپنے گھر کی وسیع و عریض چھت پر…