We Will not Surrender our City to Death … Poem/ Dr. Jawaz Jaffri… Translated by:: Sarah Ali Khan

A poem in the perspective of Corona Virus
We Will not Surrender our City to Death

………………………………………………………………………..

Death
Ambushed right under my nose
And kept watch near this fragrant being
I eyed those pink lips wistfully
And went about inventing my bedding
With thorns of Loneliness
I am alive
With the solitude of my share
Solitude
Crawls between the walls and doors
And isolation keeps watch
Beyond our front doors
My cordial hands
Once devoted to building bridges of love
Are drying lying beside me
The lamp of consummation fears the wind
But i will desire her union
Lying in my grave
In wait of one last ray of sun through a crack
My blood entertains the urge
For the longest kiss on those invigorating lips
But there’s a skyhigh grim wall of fear between us
I lick it to death every night
But it begins to loom large
With the first rays of the new sun
I saw the pale countenance of my children
One last time with eyes moist
And in the backyard I cried
Leaning against the wall de lament
Vacant streets write letters
To my children
But they’re standing beyond the wall
Conversing with death
“we will not surrender our city to death”
I sit in my melancholic room
Inventing distances between people
Silence not laughter echoes in my courtyard
Solitude not people live in my neighbourhood
All the voices around me are dead
The old god
Sitting in the seventh heaven
Is busy designing coffins
Death
Is a breath away
Looks like a greedy crow towards our fresh bodies
The hand of death
Brands our bodies
Our fertile bodies are a fodder for death
The wind and the earth together will consume them
And the worn out sky
Will shed tears on our untimely death
And the consoling birds
Will lament in our memory
Translated by: Sarah Ali Khan
*****************************

کرونا وائرس کے تناظر میں
ہم اپنا شہر موت کے حوالے نہیں کریں گے
ڈاکٹر جواز جعفری

………………………….
موت نے
میری ناک کے نیچے گھات لگائی
اور اس خوشبوداروجود کے قریب
پہرہ دینے لگی
میں نے ان گلابی ہونٹوں پہ
حسرت کی نظر کی
اور تنہائی کے کانٹوں سے
اپنا بچھونا ایجاد کرنے چل دیا !
میں
اپنے حصے کی تنہائی کے ساتھ زندہ ہوں
تنہائی
جو درودیوار کے درمیان رینگتی ہے
اور فاصلے
ہمارے گھروں کے باہر پہرہ دیتے ہیں
میرے گرم جوش ہاتھ
جو کبھی محبت کے پل تعمیر کرتے تھے
میرے پہلو میں پڑے سوکھ رہے ہیں
وصل کا چراغ
ہوا کی زد پر ہے
مگر میں قبر کے شگاف میں
سورج کی آخری کرن کی رسائی تک
اس کے وصل کی تمنا کروں گا!
میرے لہو میں
ان زندگی بخش ہونٹوں کے
طویل ترین بوسے کی تمنا
سر اٹھاتی ہے
مگر ہمارے درمیان
آسمان کو چھوتی
خوف کی کالی دیوار ہے
جسے میں ہر رات چاٹ کر نابود کرتا ہوں
مگر تازہ سورج کی پہلی کرن کے ساتھ
یہ پھر سے بلند ہونے لگتی ہے!
میں نے اپنے بچوں کے زرد چہروں کو
آخری بار
نم آلود نظروں سے دیکھا
اور گھر کے پچھواڑے میں
دیوارِ گریہ سے لگ کر رونے لگا
خالی گلیاں
میرے بچوں کے نام
سندیسے لکھتی ہیں
مگر وہ دیوار کے اس طرف کھڑے
موت سے مکالمہ کرتے ہیں
“ہم اپنا شہر
موت کے حوالے نہیں کریں گے”!
میں
اپنے اداس کمرے میں بیٹھا
انسانوں کے درمیان
فاصلے ایجاد کرتا ہوں
میرے صحن میں قہقہوں کی جگہ
سناٹا گونجتا ہے
میرے ہمسائے میں
انسانوں کی بجائے
تنہائی آباد ہے
میرے اردگرد سب آوازیں مر چکیں
ساتویں آسمان پہ بیٹھا
بوڑھا خدا
ہمارے مردہ جسموں کے لیے
تابوت بنانے میں مصروف ہے!
موت
ایک سانس کی دوری سے
ہمارے تازہ جسموں کو
حریص کوے کی طرح
للچائی نظروں سے دیکھتی ہے
دستِ اجل
ہمارے زندہ جسموں پہ نشان لگاتا ہے
ہمارے ہرے بھرے جسم
موت کا چارہ ہیں
خاک اور ہوا
انہیں مل کر ٹھکانے لگائیں گی
بوسیدہ آسمان
ہماری ناگہانی موت پر آنسو بہائے گا
اور غمگسار پرندے
ہماری یاد میں
نوحہ گری کریں گے!

You might also like
Loading...