وبائے عام اور اردو ادب ۔۔۔ ایک جائزہ (۳) :خیال نامہ

(گزشتہ سے پیوستہ )

اس سے پہلے اس بات پر گفتگو ہوچکی ہے کہ وباکے ماحول میں تخلیق کردہ اردوشعری ادب میں شعرا نے محبوب سے شکوے کی جگہ احتیاط اور خوف میں لپٹے فراق کی کیفیات کو اشعار میں ڈھالا ہے- یوں انسانی مسائل اور جذبوں کے بیانیے کے لیے ایک نئے پیٹرن کی بنیاد رکھی گئی ہے ۔ جس میں جذبے کے ٹھہراؤ اور توازن کی صورت سامنے آئی ہے۔ اس علاوہ ’’سینٹائزر‘‘ ، ’’ ماسک ‘‘ ، ’’ سیلف آئیسولیشن‘‘ ، ’’ قرنطینہ ‘‘ ، ’’ کمفرٹ زون ‘‘ اور وائرس جیسی نئی طبی ترمینالوجیز اردو شاعری کا حصہ بن رہی ہیں۔

شہرکی وبازدہ فضااور گھروں میں مقیدزندگی کی بے بسی کا عکس عہد حاضر کے شاعری میں نمایاں نظرآرہا ہے۔گھروں کے اندر بھی زندگی تقسیم ہوکررہ گئی ہے ۔ ’’سوشل ڈسٹینس ‘‘کے بیانیے نے ہم سب کواپنے کمروں تک محدود کردیاہے اور خدشات کی فضاسے ’’ سکون ‘‘ کی کیفیت یہاں بھی موجود نہیں ہے۔  مجھے پروفیسریوسف خالد کا ایک بہت پراناشعریاد آرہاہے:

                    اپنے کمروں میں مقید ہوگئے ہیں آدمی

                                                شہرمیں اب پہلے جیسی رونقیں باقی نہیں

’’وبائے عام اور اردو ادب ۔۔۔ ایک جائزہ ‘‘ کی پہلی دواقساط میں بہت سے شعراکادستیاب کلام شامل کیاجاچکاہے۔ اس بار بھی غزل کے اشعار اور نظموں کوالگ حصوں میں ترتیب دیاگیاہے۔

آپ کی رائے کا انتظار رہے گا

منتخب اشعار :

وبا جو آئ ہے سَلمَان ٹلنے والی ہے.
پر اِس کے بعد یہ دُنیا بَدَلنے والی ہے.
سید سلمان گیلانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

‘فخر’ میں نے بھی ایک لکھا ہے نوحہ
فضا شہر میں بھی غزل کی نہیں ہے

ڈاکٹرفخرعباس

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا کوئی دفن سے پہلے یہ بتائے گا ہمیں
ہیں کھڑے لوگ جنازے میں ہمارے کتنے

ڈاکٹرشاہدہ شاہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بے طلب بے  سبب  پڑے ہوئے ہیں
کیسی مشکل میں سب پڑے ہوئے ہیں

جانور  اور  پرند عیش میں ہیں
وہ جو تھے منتخب، پڑے ہوئے ہیں
سعیدسادھو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بہت مصروف ہو تم بھی ، بہت مجبور ہیں ہم بھی
تمھیں فرصت نہیں ملتی ، ہمیں روزن نہیں ملتا
خاور چودھری 

…………………………………….

کھڑکیاں بند ہوئیں قفل ہے دروازوں پر

آو دیوار سے باتوں کی روایت ڈالیں

نیل احمد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا خبر تھی جذب کر لے گا زمیں کو ماہتاب.
دھیرے دھیرے زخمِ دل، دل سے بڑا ہو جائے گا.
محمد نعیم جاوید نعیم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گھر کے پنجروں میں سبھی قیدی ہوئے ہیں احمد
مجھ کو لگتا ہے پرندوں نے شکایت کی ہے
احمد وصال

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں اپنے آپ سے ملتا ہوں ایسے لمحوں میں
مرے لیے تو اداسی بھی ایک نعمت ہے
جدا ئیوں کا بہانہ” وبا” بنی تاباں
وگرنہ شہر کی یوں بھی جداطبیعت ہے
عبدالقادر تاباں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم سے یہ شہر پھر سے بسایا نہ جائے گا
ہم چل دئیے ، تو لوٹ کہ ایا نہ جا ئے گا
سید ظہیر حسرت کاظمی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سچ تو یہ ہے وبا سے پہلے بھی
ہم نے ایسے ہی دن گزارے ہیں

عادل حسین

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اتنی ویرانی کبھی پہلے نہیں دیکھی تھی
کوئی تو مجھ سے کہے یار پریشان نہ ہو
فقیہ حیدر

……………………………………

اب ہمیں سہنا پڑی ہیں اختیاری دوریاں
یہ ہماری بے بسی کی انتہا ہے دوستو

کیا سنائیں داستاں تم کو اجڑتے شہر کی
جس کو دیکھو خوف میں وہ مبتلا ہے دوستو

ارشد محمود ارشد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اگرچہ  ایک  ہی کمرہ  ھے میرے  حصے  میں

مگر ملی ھے مجھے سارے گھر کی بے چینی

ناصر علی سید

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لوگ میت کو بھی دفنانے سے گھبراتے ہیں
ایسا کرتے ہیں چلو ڈوب کے مر جاتے ہیں
رانا سعید دوشی

…………………………………..

فکر منہ کی نہ الجھے بالوں کی
دن گزرتا  ہے ہاتھ  دھونے میں
خوف اندر بھی گھر کے باہر بھی
چھپ کے بیٹھی ہوں ایک کونے میں
فاصلے   بڑھ   گئے   وباؤں  سے
عمر گزرے گی ایک ہونے میں

فوزیہ شیخ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پھیل رہا ہے ہراس، ایک وبا کی طرح
چھانے لگا ہے سکوت شہر و مضافات پر

میری خموشی اگر کچھ نہیں بتلا رہی
تبصرہ پھر کیا کروں صورتِ حالات پر
شاہد ماکلی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنا ہے گھر میں پڑا ہے وہ ایک مدت سے

پہ، کہہ رہا ہے کہ باہر بلا کی ظلمت ہے
رخسانہ سحر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کرونا  آئے  یا  آئے  نہ  فیصلؔ
مری گلیوں میں غربت آ گئی ہے

فیصل امام رضوی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہیں بلاؤں کی زد میں شہر کے شہر
امن اور آشتی گئی ،سو گئی!
چپ ہے شہنائی ،بانسری خاموش
ساز کی نغمگی گئی ،سو گئی !
انجم عثمان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انھیں بتائے کون, اس مرَض کی یہ دوا نہیں
کہ کر رہے ہیں خوف ہی سے جو علاج خوف کا
احمد نواز
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فصلِ گل لوٹ آئے گی اک دن
شاخِ امید بھی ہری ہوگی
عبدالعزیز
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روح کے تار چیخ پڑتے ہیں
خامشی ساز جب بجاتی ہے
حراقاسمی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جان لو ! منطقِ وبا بھی ہے
آزمایش بھی ہے سزا بھی ہے

مظہرعباس

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہجر اچھا ہے نہ وصال اچھا
دور سے پوچھو، میرا حال اچھا
مومی خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آؤ دشمن کو مات کرتے ہیں
چند دن احتیاط کرتے ہیں
مقصوداحمد شامی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جان سے ہاتھ گر نہیں دھونے
ہاتھ پھر بار بار دھونے ہیں
طارق چغتائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منتخب نظمیں :

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خداؤں کے درمیان (مقصود وفا)
خدایا،
تجھے کچھ خبر ہے
زمانہ خداؤں سے بھرتا چلا جا رہا ہے
خدایا،
تجھے اِن خداؤں نے پتھر بنایا
طوافوں میں رکھا
صلیبوں پہ کھینچا
معیشت بنایا……
یہ آبادیاں کوئی ریوڑ ہیں کیا؟
سدھائے ہوئے سگ جنہیں ہانکتے ہیں
غلاموں نے تاریخ کے سارے دکھ جی لیے
اور منڈی میں بیٹھے ہوئے
نیکیاں بیچتے آڑھتی…
اِن غلاموں سے سانسوں کی پونچی طلب رہے ہیں
تری سلطنت میں یہ بازار
شہروں کو ویران کرتا ہوا
اُن صفوں تک سجا ہے
جہاں شوقِ سجدہ کو ترسی جبیں کے لیے
جائے سجدہ کی گنجائشیں اب نکلتی نہیں ہیں
ترے آسمانوں سے جھڑتی ہوئی ریت میں
موت کا خوف ہے
ایسے انساں کہاں پر چھپے ہیں
جو تیری اطاعت گزاری کریں
تیری خاطر جیئں….
اور ترے سامنے
اِن خداؤں کے ہاتھوں مریں
جو وباء بن کے دنیا میں پھیلے ہوئے ہیں.

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قرنطینہ (عرفان صادق)
بہاروں کے دن ہیں
مگر شاخچوں پر
گلوں کی جگہ خوف دہکا ہوا ہے
سبھی تتلیوں کے پروں پر ہواؤں نے سناٹا لکھا ہوا ہے
خموشی بدن کو کترتی چلی جا رہی ہے
ہواوں میں اک زہر ہے
سانس لیتے ہوئے ڈر رہے ہیں سبھی
لوگ چہروں پہ پردے گرائے ہوئے
اپنے ہی شہر میں
اجنبیت کے اندھے کنویں میں گرے جا رہے ہیں
گھروں کو قرنطینہ بنتے ہوئے دیکھنا
جیسی کوئی اذیت نہیں
یہ عجب بے بسی ہے
مسلسل۔کرونا سے مرنے کے اعداد
بڑھتے چلے جا رہے ہی
عجب بے بسی ہے
دعاؤں کا کشکول تھامے ہوئے
اسم پڑھتے ہوئے
ورد کرتے ہوئے
اپنے گھر کی چھتوں پر اذاں کی صدائیں لگاتے ہوئے
اے خدا تھک گئے
خوف کی یہ فضا سر سے ٹلتی نہیں
ایسے لگتا ہے تنہائیوں کی صلیبوں پہ لٹکے ہوئے
اپنے مرنے کا اعلان ہونے کو ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وبا 2020 (شہزاد نیر)
ہراس اک گلی سے دوسری گلی کو چل پڑا
سیاہ رنگ خوف تارکول کی طرح
زمیں کی ہر سڑک پہ پھر گیا
جہاں صدا کے پنچھیوں کی بے خطر اڑان تھی
وہاں پہ اب خموشیوں کے جال ہیں
دلوں سے اٹھ کے خوف آنکھ آنکھ سے ابل پڑا
ہوا میں بے یقینیوں کی باس ہے
نگر نگر ہراس ہے
بدن بدن سے دور ، ہاتھ ہاتھ سے ڈرا ہوا
بشر کھلی فضا سے خوف کھا گیا
ہوا سے خوف کھا گیا
محبتوں میں قرب کی ادا سے خوف کھا گیا !
بہار اپنی طشتری میں گل لیے کھڑی رہی
پرند ڈھونڈتے رہے
سگانِ کوچہ گرد ایک دوسرے سے پوچھتے ہیں
آدمی کدھر گیا ؟
اور آدمی نے لڑکھڑاتی سانس سے
کتابِ جاں کا آخری ورق لکھا ۔۔۔
وصال، قرب، دوستی، بہار، پیار سچ سہی
فنا کے خوف اور
بقا کی بھوک سے بڑا کوئی بھی سچ نہیں!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کورونا کی وصیت (نوید ملکٍ)
ہر اک گاڑی کا پہیہ ٹھیک تھا پھر بھی
سڑک پر دوڑتی وحشت نے سینے باندھ رکھےتھے
کوئی چابی نہیں تھی جس سے دل کو کھول کر
ہر آرزو کے نامکمل نقش کی تکمیل ہو سکتی
نگاہیں خوف پی کر اُس کی کڑواہٹ
رگوں پر ثبت کرتی تھیں
مشینیں مضطرب تھیں اور کعبہ مسجدوں کے قفل پر آنکھیں جمائے
منہدم سجدوں کے پرزے ڈھونڈنے والوں کی ساری التجائیں سن رہا تھا
صدا آئی!
جہاں والومیں چلتا ہوں
جہاں میں نے اجل کی پھونک سے روحیں جلائی ہیں
وہاں میں نے کوئی مذہب نہیں دیکھا
کسی بھی فلسفی کے کام کی جیبیں نہیں پرکھیں
میں جس بھی صبح کے ماتھے پہ اپنے ہونٹ رکھتا تھا
تو اُس کی چیخ سے بیتے ہوئے سارے زمانے پھڑ پھڑا کر
کہکشاؤں کی اداسی، بے بسی کا بین کرتے تھے
کسی بندوق والے نے مرا “ویزا” نہیں دیکھا
کسی سرحد کی مٹی نے بدن میرا نہیں جکڑا
کسی پرچم کا میرے سامنے ماتھا نہیں چمکا
کسی سورج نے میری کوئی چنگاری نہیں چاٹی
جہاں والو!
خداؤں نے مری جنبش پہ رنگیں پانیوں کو خوب برسایا
مگر کوئی بشارت اُن کے ایوانوں پہ دستک دے نہیں پائی
کہاں ہیں لوگ جو ہر ذہن کو “تعویزا” کرتے تھے؟
زمیں پر جتنے جادوگر ہیں اُن کے سارے منتر منجمد کیوں ہیں؟
جہاں والو !
میں چلتا ہوں
مگر جو لوگ مجھ سے بھی بڑے ظالم ہیں
میرے بعد دنیا میں
گھٹن تقسیم کرنے کا کوئی بھی سلسلہ کٹنے نہیں دیں گے
اجل کی بھوک کو مٹنے نہیں دیں گے
کئی تابوت جو خالی پڑے ہیں اُن کو بھر لینا
جہاں والو! میں چلتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خدا (اپسرا گل)
(کنٹرول اینڈ کمانڈ)
گلوب گھماؤ
اور سکرین پہ ساری دنیا سٹریچ کرو
منظر دیکھو
ہوسپٹلز کے پورٹیکو میں بھی ہیں پیشنٹ
ماسک ہی ماسک
تابوتوں کا رش
ایک گڑھے میں سینکڑوں لاشیں
سوشل اینیمل کو دیکھو
تنہا گھر میں قید
وائلڈ بیسٹ بنا ہوا تھا
ان دیکھا ایک وائرس ہے
ان ڈیٹیکٹیبل ٹو آئی
جس سے موت پڑی ہے سب کو
موت ہو یا پھر زندگی ہو
میں نے فیصلہ کرنا ہے
زوم کرو
مسجدیں دیکھو
گرجے دیکھو
مندر دیکھو
دیکھو سب بازار زمیں کے
سناٹا ہے
زوم کرو
مجھے پکارنے والوں کی نیت دیکھو
ان کی توبہ اور دعائیں
ان کی فائلز میں پن آپ کر دو
میں تو صمد ہوں
اور انسان خسارے میں ہے
میں نے فیصلہ کرنا ہے
زوم کرو
سارے ملائیک
ادھر اس لیب میں سائینسدان کے ہاتھ میں وایل فوکس کر لو
نیت دیکھو
اینٹی وائرس ایکٹو کر دو
میں نے فیصلہ کرنا ہے
سائینس اور معیشت کا
مستقبل کے نقشے کا
کافر، مشرک اور مسلماں
میری جانب تکتے ہیں
میں ہی رب ہوں
اور صمد ہوں
میں نے فیصلہ کرنا ہے

……………………………………

امکان : ڈاکٹر عاصم بخاری

اگرچہ رات گہری ہے
ہر اک جانب اندھیرے کی عجب چادر
سی لپٹی ہے
عجب سی خامشی نے ہر طرف کو گھیر رکھا ہے
صدا کوئی نہیں ہے
اور یہ آنکھیں ابھی منظر بنانے کی
تگ و دو سے بھی عاری ہیں
یہ اکلاپا کسی کی جان لینے کو پیاسا ہے
فقط سوچوں کا اک اشہب
ذرا سی آن میں کتنی مسافت کاٹ لیتا ہے
اسے وحشت نہیں آتی
بظاہر وقت بھی ٹھہرا ہوا سا ہے
مگر یہ رات کا منظر
انہی پہلے سی راتوں کا تسلسل ہے
اسے بھی بیت جانا ہے
نیا منظر پرانے سب مناظر کو بدل دے گا
اندھیرے مٹ ہی جائیں گے
صدا آ کر خموشی کا فسوں سب توڑ ڈالے گی
مرا وجدان کہتا ہے
سحر کے لوٹ آنے میں ذرا سا وقت باقی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نئے دنوں کے ضابطے (سعیدعباس سعید)

گلاب موسم ابھی عدم سے نہیں جواترے
پیام ان کا ملا ہے مجھ کو
کہ اس برس نہ کوئی بھی سیرِچمن کو نکلے
کہ اس برس کی بہار کے اپنے ضابطے ہیں
نئے قرینوں کی محفلیں ہیں
نئے طریقوں کے رابطے ہیں
مصافحے سے گریز ہوگا
بجائے ہاتھوں کے دل ملیں گے
نئے دنوں کے یہ ضابطے ہیں
کہ آنے والے دنوں کے ضامن
یہ فاصلے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خدائے برتر (یونس خیال)
خدائے برتر !
یہ کیاہواہے
کہ تیرے نائب کی بستیوں میں
عجیب کہرام سامچاہے ؟
سبھی گھروں میں چھپے ہوئے ہیں
ڈرے ہوئے ایک دوسرے سے
یہ سوچتے ہیں
گھروں میں بیٹھے توبھوک ہم سب کو مار دے گی
گلی میں نکلے تو
وینٹی لیٹر نہیں ملے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدائے برتر !
یہ تیرے نائب کے
علم وفن کی
ترقیوں کے عروج کی ساری داستانیں
ہوا ہوئی ہیں
سبھی کتابیں ، علوم سارے
کہاں گئے ہیں؟
عجیب سا قحط پڑگیاہے۔
ہماری گلیوں میں
بھوک رقصاں ہے
موت رقصاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدائے برتر !
مرے مقدرکا وینٹی لیٹر
اسے عطاکر
جواپنے گھرمیں
پڑاہواہے
جوموت سے جنگ لڑتے لڑتے
جوان بیٹی کاسوچتاہے
۔۔۔۔
تُومیرے حصے کے باقی لُقمے
انھیں عطا کر
کہ جن کی مائیں
یہ سوچتی ہیں
کہ بھوک اُتری تو
اُن کے بچوں کاکیابنےگا؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (جاری ہے)

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post