وبائے عام اور اردو ادب ۔۔۔ ایک جائزہ (۲) : خیال نامہ

(گزشتہ سے پیوستہ )

وباکے ماحول میں تخلیق کردہ اردوشعری ادب میں شعرا نے محبوب سے شکوے کی جگہ احتیاط اور خوف میں لپٹے فراق کی کیفیات کو اشعار میں ڈھالا ہے- اور یوں انسانی مسائل اور جذبوں کے بیانیے کے لیے ایک نئے پیٹرن کی بنیاد رکھی ہے ۔ جس میں جذبے کے ٹھہراؤ اور توازن کی صورت سامنے آئی ہے۔

عالمی سطح کے اس سانحے نے اردو شاعری کو نئی طبی ٹرمینالوجیز سے بھی متعارف کروایا ہے۔ ’’ سینٹائزر‘‘ ، ’’ ماسک ‘‘ ، ’’ سیلف آئیسولیشن‘‘ ، ’’ قرنطینہ ‘‘ ، ’’ کمفرٹ زون ‘‘ اور وائرس جیسے الفاظ بے ساختگی کے ساتھ اردو شاعری کا حصہ بنے ہیں ۔

عصرحاضر کے اس سب سے بڑے المیے میں دکھ اور موجود مایوسی کی کیفیات سے نکل کر امید کے سورج کاانتظار بھی اس شاعری میں واضح دیکھا جاسکتا ہے۔ شعراء کی تخلیقات میں دکھ کے بیان کے ساتھ ساتھ نئی امید کا پیغام بھی شعری اظہارکا حصہ بناہے ۔اس ضمن میں پروفیسر یوسف خالد کے دو شعر دیکھیں:

ہو سکے تو گلاب رت میں ہمیں
خوف کو ذہن سے اتارنے دیں
ہم نے ہر  احتیاط کر  لی ہے
اب ہمیں زندگی گزارنے دیں
اس سانحے کے پیچھے سرمایہ دارانہ ذہنیت اورپوری دنیاکو طاقت کے زور پرمحکوم بنانے کی عالمی سازشوں کی طرف واضح اشارے بھی اس طرزکی اردو شاعری کے موضوعات کاحصہ بنے ہیں ۔اس ضمن میں فرحت عباس شاہ کے دواشعار دیکھیے :

جہاں بھی یہ منحوس کرونا بنتا ہے
اس کا کچھ نا کچھ تو ہونا بنتا ہے
آخر کار   یہ  کاروبار   ہی   نکلے  گا
اس سے پیتل ،چاندی، سونا بنتا ہے

اس  کے علاوہ اس موضوع پر اردو شاعری میں جوچیز نمایاں ہوکر سامنے آئی ہے وہ رنگ،نسل، مذہب، علاقے اورقومیت سے ہٹ کر پوری انسانیت کی بے بسی،دکھ اور ضروریات کی سانجھ کا احساس ہے۔ کچھ احباب کے اشعارپیش پیں :
وبائے عصر نے خانہ نشیں کیا ہے ہمیں
رفاقتوں کا نیا سلسلہ دیا ہے ہمیں
ڈاکٹرسعادت سعید
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سبھی سکندر ِاعظم کھڑے ہیں سہمے ہوئے
زمیں پہ ایک جراثیم کی حکومت ہے
جاوید رامشؔ
…………………………………………………………..
کیوں نہ بے فکر ہو کے سویا جائے
اب بچا کیا ہے جس کو کھویا جائے
اظہر فراغ
…………………………………………………………..
کل تلک آزاد تھا  اور  آج دیکھو  کیا  ہوا
خوف نے ہر شخص کو دیوار میں چنوا دیا
فیصل اکرم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شہر کے شہر اجڑتے ہی چلے جاتے ہیں
اب کے ایسی پڑی افتاد ,خدا خیر کرے
مسعود ساگر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شفائیں بانٹتا سورج نکال کر مولا
ہمارے شہر کی رونق بحال کر مولا
احمد نعیم ارشد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا وقت تھا گلے سے لگاتے تھے وہ ہمیں
اب دیکھتے ہیں ان کو مگر دور سے ہی ہم
ٹھہرا  یہاں  پہ ہاتھ  ملانا بھی اک وبا
اب دور ہوتے جائیں گے کب تک خوشی سے ہم

تاثیرنقوی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے پیچھے دوڑ رہے ہیں جلتے سائے
دیواروں پر ناچ رہے ہیں ڈھلتے سائے
لمحہ لمحہ اپنے پنجے گاڑ رہے ہیں
دل میں خوف ہیولے بن کر پلتے سائے
بابر شکیل ہاشمی

……………………………………………………..

چپ کا عالم ہے مولا دھرتی پر
چلتی پھرتی کہانیاں خاموش
ڈاکٹرفرحت عباس

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غم کی راتیں ہیں فنا کے دن ہیں
گریہ و آہ و بقا کے دن ہیں
تم تو پہلے ہی کہاں ملتے تھے
اور پھر اب تو وبا کے دن ہیں

کلیم احمد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غور سے کیا دیکھتا میں شہر کے منظر شفیق
دیدہ ور ہوں اور اپنےآنسوؤں میں قید ہوں
شفیق آصف

………………………………………………….

تیری طلب بڑھی ہے سزا کے دنوں میں بھی
چاہا ہے تجھ کو میں نے وبا کے دنوں میں بھی
میں   مر مرا  گیا  تو  تجھے  یاد  آوں  گا
ہوتا تھا تیرے ساتھ دعا کے دنوں میں بھی
قمر ریاض

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عجیب کیا جو پڑی خلق کو پریشانی
کبھی نہیں بھی تو کرتا خُدا نظر انداز
عطا ا لحسن

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ارے ! جینا مرنا ہے مالک کی مرضی
سمجھتے ہو کیوں تم خدا ہے کرونا

ابتہاج ترابی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مولا عجیب وقت ہے رحمت عطا کرو
مولا ہمارے واسطے کچھ تو شفا کرو

ندیم ملک

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں جو چپ چاپ پڑا رہتا ہوں گھر میں اکثر
مجھ کو اندازہ ہے۔۔۔۔ حالات کی سنگینی کا

ارشد شاہین

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ مرگ ِ صوت و صدا جاں فگار ہے مرشد
وبا کے دن ہیں محبت پہ بار ہے مرشد
سہیل رائے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گرچہ پاوں میں پھر آبلے بنائیں گے
دلوں پہ نقشے نئے درد کے بنائیں گے
خدا کے بعد محبت پہ ہے یقین مرا
یہ فاصلے ہی نئے راستے بنائیں گے
اعجاز حیدر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آنے جانے سے گئے چہرہ دکھانے سے گئے
کیسی پھیلی ہے وبا ہاتھ ملانے سے گئے

فیصل زمان چشتی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زمین کی فضاؤں پر ہے ایسا راج خوف کا
کہ سانس پر ہے واجب الادا خراج خوف کا
نگر نگر , گلی گلی اسی کا لین دین ہے
جہان بھر میں سکّہ چل رہا ہے آج خوف کا

احمدنواز

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کرونا سے تو شاید بچ ہی جاوں
مجھے اس کارویہ مار دے گا
عنایہ فلک نور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس عرصہ میں کی جانے والی شاعری میں ’’ اُداسی‘‘ ، ’’ خوف ‘‘ ، ’’ فراق ‘‘،  ’’ دعا ‘‘ اور کائنات کے خالق کی طرف رجوع کرنے کی تلقین کے موضوعات اور کرونا کے خلاف ’’ جنگ ‘‘ جیتے کے  عزم کے علاوہ اس جنگ میں فرنٹ لائن پر لڑنے والے طبی عملہ کو خراجِ تحسین بھی پیش کیا جارہا ہے ۔ اور سچ تو یہ ہے کہ غزل کی بجائے نظم نے ان موضوعات کو زیادہ عمدگی سے اپنے دامن میں سمیٹاہے ۔ اس ضمن میں کچھ شعراء کی نظمیں دیکھیے :

کورونا جنگ جیتنی ہے (ناصر ملک)
اے ربِ عصر! ہم نے بڑے دکھ اُٹھائے ہیں
لیکن ہر امتحان میں جوہر دکھائے ہیں
اے ظلمتِ الیم! ذرا دشمنوں سے پوچھ
ہم اہلِ دل تو موت سے ٹکراتے آئے ہیں
اے فرقہ ساز! جال میں آنے کے اب نہیں
ہم اس زمیں کی خاک، اسی ماں کے جائے ہیں
اے وقتِ اضطراب! پلٹ جا، کہ بارہا
تُو نے ہمارے دست و ہنر آزمائے ہیں
قائم رہو اے ملکِ خداداد ! حشر تک
ہم رکھ کے اپنی جان ہتھیلی پہ لائے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وبا کے دنوں میں خدا سے مکالمہ(نجمہ منصور)

اے میرے مہربان خدا
اے کن فیکون کے مالک
میں تیری ادنی زمین زادی
تیرے حرف ‘کن’ کی منتظر
تجھ سے دکھ سکھ کرنا چاہتی ہوں
یہ جانتے ہوئے بھی کہ
دکھ، اداسی اور خاموشی کی زبان میں لکھی ہوئی عرضی
جب تیرے دربار میں پہنچتی ہے تو
فرشتوں میں اضطراب کی لہر دوڑ جاتی ہے
ابلیس ہنستا ہے کہ
میں نہ کہتا تھا
یہ آدم زاد
زمین پر فساد پھیلائے گا
اے میرے مہربان خدا
اے کن فیکون کے مالک
سن
آج سب زمین زادے
شرمسار
نظریں جھکائے
اپنی اپنی خود ساختہ قبروں میں دبکے ہوئے ہیں کہ
ان کےلیے
زمین کے اوپر
ذرا سی جگہ بھی نہیں بچی ہے
کیونکہ
وہاں ان کے پھیلائے ہوئے
فسادوں کے وائرس
بکھرے پڑے ہیں
اور وہ
وہ ڈر کے مارے قرنطینہ میں
“چادر تطہیر” اوڑھے چپ چاپ بیٹھے ہیں
اے میرے مہربان خدا
اے کن فیکون کے مالک
ہاں یہ سچ ہے کہ
جب تیرے مظلوم
تیرے ہی آدم زادوں کے ہاتھوں
خون میں لت پت تڑپ رہے تھے
تو وہ ہمیں تھے جو
گونگے بہرے خاموش تماشائی بنے
اپنے اپنے کمفرٹ زون میں مست پڑے تھے
اور آج
آج جب ان کی آہیں
کرونا کی صورت
پوری دنیا میں پھیل چکی ہیں
تو ہم سجدوں میں پڑے
تیرے حضور رحم کی اپیلیں کر رہے ہیں
اتنی اپیلیں کہ جنہیں رکھنے کےلیے زمیں سے آسماں تک
جگہ کم پڑ جائے
یا خدا دیکھو نا
اب تو ہماری محبتیں
ہمارے خواب اور
ہماری تنہائیاں
سب کرونا کی قید میں ہیں
اے میرے مہربان خدا
اے کن فیکون کے مالک سن
ہمیں اس قید تنہائی سے رہائی دے
میں تیری ادنی نظم زادی
تیرے ایک لفظ ‘کن’ کی منتظر ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنو! یہ حالت جنگ ہے ( نیلمادرانی)
گلی، کوچوں میں دشمن
دندناتا پھر رھا ہے
ھمارے گھر وہ بنکر ھیں
جہاں رہ کر
ھمیں جنگ جیتنی ہے
ذرا سوچو!
یہ بنکر کس قدر محفوظ ھیں
ھر شے میسرہے
ھوا ھے، روشنی ہے
کھانا، پینا اور سب اپنے
ھمارے پاس ھیں۔

اگر کچھ دن یہاں ٹھہرے
تو یہ جنگ جیت جائیں گے
یوں دشمن کو ھرائیں گے

سنو! سوچو تمہارے گھر
قبر سے کتنے بہتر ھیں

گھروں میں بیٹھ جاو
اور دعا مانگو
ھر اک دشمن وبا سے
اور بلا سے وہ بچائے گا
جو خالق ہے ، جو حافظ
جو اکبر ہے، جو اللہ ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آئسولیشن (عبدالباسط صائم)
خدا ہم سے ناراض ہے کچھ دنوں سے ۔۔۔
وہ اک لمبے عرصے سے بنگلوں مِحلوں مکانوں کے ٹوٹے ہوئے, گندے کمروں میں لیٹے ہوئے بوڑھے ماں باپ تکتا رہا ہے۔۔۔
کہ جن کےسروں میں محبت سفیدی کی صورت چمکتی رہی ہے دمکتی رہی ہے۔۔۔مگر ان کے بیٹوں کو اور بیٹیوں کو۔۔نواسوں کو پوتوں کو اور پوتیوں کو کبھی اتنی فرصت نہیں مل سکی کہ وہ بوڑھے لرزتے ہوئے ہوئے ٹھنڈے ہاتھوں کو دل سے لگاتے۔۔۔۔
ضعیف آدمیت کے پاوں دباتے۔۔۔
اندھیرے مٹاتے۔۔۔کوارٹر میں مرتے ہوئے بوڑھے لوگوں کو پانی پلاتے۔۔۔
خدا ہم سے ناراض ہے کچھ دنوں سے۔۔۔
وہ سب جانتا ہے وہ سب دیکھتا ہے۔۔۔
اسے علم ہے ہم نے پڑھ لکھ کے ماں باپ سے کیا کیا ہے۔۔۔
انہیں کیا دیا ہے۔۔۔وہیں چھوڑ آئے ہیں ہم ان کو گاوں میں مرجانے کو۔
اور پردیس میں سالہا سال سے جی رہے ہیں ہنسی سے خوشی سے ۔۔۔۔۔نہیں دل میں آیا خیال اپنے گھر جانے کو
بوڑھے ماں باپ گھٹنوں کی تکلیف سے اوندھے بستر پہ لیٹے پڑے ہیں وہاں ۔۔۔اور ہم کامیابی کی مسند پہ اونچے بہت اونچے سب سے کھڑے ہیں یہاں۔۔۔۔
وقت پر ان کو کھانا ملا یا نہیں ۔
پھول ان کے دلوں میں کھلا یا نہیں۔۔۔
کیا دوائی بھی لی ہے انہوں نے کبھی۔۔
کتنی تکلیف ہے ان کے دل میں ابھی۔۔۔
ہم نہیں جانتے۔۔۔ہاں خدا جانتا ہے۔۔۔خدا دیکھتا ہے۔۔۔
ہاں تبھی تو وہ ناراض ہے کچھ دنوں سے۔۔۔
اور ناراض ایسا کہ دنیا کے ہر ملک ہر شہر سے اپنے بوڑھوں کو واپس بلانے لگا ہے۔۔۔
جاگنے کی اذیت میں مرتے ہوؤوں کو سلانے لگا ہے۔۔۔
جن کے ہاتھوں سے شرم آ رہی تھی اسے۔۔۔ان کو ان کی دعاوں سمیت اس جہاں سے اٹھانے لگا ہے۔۔۔
مجھ کو لگتا ہے اس نے بہت خوبصورت سے گھر اپنی جنت میں بنوا لئے ہیں۔۔
جہاں ہر طرف روشنی ہے دئیے ہیں۔۔
جہاں کوئی کھانسے تو چڑیا دوائی لئے دوڑی آئے۔۔
جہاں کوئی روئے تو روشن پری آکے آنسو چھپائے۔۔
جہاں ہاتھ کانپیں تو سچا فرشتہ سہارا لئے دوڑتا پہنچ جائے۔۔۔
جہاں سانس اکھڑے تو بلبل محبت سے خوشبو ملائے۔۔۔
خدا ہم سے ناراض ہے کچھ دنوں سے۔۔۔۔
تبھی تو وہ ہم سب کو بے بس اکیلے بڑھاپے کے منظر دکھانے لگا ہے۔۔
تبھی تو ہم کو اکیلا ہی سب سے بٹھانے لگا ہے۔۔۔
بتانے لگا ہے۔۔۔
کہ یوں جی کے دیکھو۔۔۔
اور اپنے بڑے گھر کے کمروں میں مرتے ہوئے بوڑھے لوگوں کے اشکوں کو تم پی کے دیکھو۔۔۔”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈاکٹرز اور کورونا سے لڑنے والے مجاہدین کے نام(ڈاکٹر ثروت رضوی)
ماسک میرے چہرےکا حصہ بن گیا ہے
ہاتھوں سے غلاف اتارنے کی نوبت ہی نہیں آتی
پرفیوم مجھے حسرت سے دیکھتے ہیں
اور میں ڈیٹول ملے محلول کی پھوار سے دن رات سرشار ہوں
سینٹائزر کے مسلسل استمال سے کبھی کبھی مجھے اپنے ہاتھوں کے حنوط ہونے کا گمان ہوتا ہے
خیال آتا ہے
مرنے کے بعد ہاتھ تو محفوظ رہیں گے
ویسے بھی یہ دست مسیحا ہیں
انہیں تاریخ میں تو محفوظ ہونا ہی ہے
مجھے ہر مریض کی آنکھوں میں موت کے سائے نظر آتے ہیں
اور انہی سایوں سے میری جنگ ہے
اور آپ سب تو جانتے ہیں نا
سائے سے لڑنا آسان نہیں
لیکن مسیحائی کے ہنر نے مجھے نادیدہ دشمن سے لڑنا سکھایا ہے
مجھے خبر ہے
ان سایوں کو شکست ہو کر رہے گی
میرے پاس یقین کا اسم اعظم ہے کہ
انشاءاللہ
جیت میری ہو گی
میرا ہر مریض شفایاب ہوکر
ہنستا مسکراتا اپنے گھر جائے گا
کورونا ہار جائے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ورلڈ و میٹر (سلمی جیلانی)
روزانہ میں اس تازہ چارٹ کو دیکھتی ہوں
فری ہینڈ پانے والے
اس وائرس سے مزید کتنوں نے
چوٹ کھائی
کتنوں کو شہ مات ہوئی
اور کتنے واپس
صحت کو پا سکے
ایسا لگتا ہے
یہ کوئی اولمپک کھیلوں کے مقابلے ھیں
ایک سو اٹھانوے ملکوں کے درمیان
خوفناک اور وحشتناک موت کی
دوڑ لگی ہے
کل تک چین جو پہلے نمبر پر تھا
آج امریکہ نے اسے مات دے دی ہے
فنا کو دوام ہے
کئی بار کی طرح
زندگی کی گلیوں میں
موت کا رقص پھر اپنے پورے عروج پر ہے
زندگی ہار رہی ہے
نئی ویکسین کے آنے تک
مسیحا کی پکار پر لبیک کہنے والے
موت کے اس اولمپکس میں
فاصلے اور خود ساختہ تنہائی
کو ہتھیار بنا رہے ہیں
ان کے تیور بتا رہے ہیں
ہمت نہیں ہاریں گے
آخری سانس تک
امید کا بریدہ پرچم
سربلند رکھیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چھونا حرام ہے ( نواز انبالوی)

اب جو تاریک راتیں ہیں
سہہ لو اس بے نام سے ہجر کو تم
کہ تمہارا مقصود ابھی
گھروں میں ٹھہرنا ہے
گھر گھر یہ پیغام پہنچانا ہے
کہ گھروں سے باہر کے راستے
قدر تاریک ہیں
اس تاریکی سے
باہر وبا کا جہان ہے
کوئی مر جائے تو چھوا جا نہیں سکتا
جاں باز کے لیے کفن تک دستیاب نہیں ہے
قبرستانوں میں کتبوں پر
صاف صاف درج کر دیا گیا ہے
“چھونا حرام ہے”
تم یہ باتیں ذہن نشیں کر لو
اسی قائدے پہ پختہ یقیں کر لو
خدا نے چاہا تو ضرور
نئ صبحیں طلوع ہونگی
ہر نئ صبح ویکسین فراہم کرے گی
اس وبال جاں کے لیے
اور سب صحت یاب ہو کر اس وبا سے
پھر سے زندگی کے تسلسل کو آگے بڑھائیں گے……

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

( ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جاری ہے)

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post