غزل : عتیق اختر افغانی

کیوں اُڑاتا ھے وہ بے پر نہیں اچھا لگتا
جس میں سودا ھی نہ ھو سر نہیں اچھا لگتا

در بدر کیوں تو بھٹکتا ھے تمنا کیا ھے
اے میرے عشق تجھے گھر نہیں اچھا لگتا

اس کو سمجھا ھی نہیں دل سے کسی نے شاید
پیار کا نام ستمگر نہیں اچھا لگتا

میں جو ڈنکے سے یہ کہتا ھوں تو کچھ بھید بھی ھے
جانے کیا بات ھے دلبر نہیں اچھا لگتا

بس یہ جرأت ھی حوالہ ھے میرے ھونے کا
مجھ کو ھر بات پہ یہ ڈر نہیں اچھا لگتا

روز اک بال نیا اس میں نظر آتا ھے
آٸینہ خانے میں آ کر نہیں اچھا لگتا

فی البدیع ھو تو میرا لطف ِ خودی بھی جھومے
مصلحت کوش سخنور نہیں اچھا لگتا

ختم ھو جاٸے گی یہ اپنے جنوں کے ہاتھوں
مجھ کو وحشت کا مقدر نہیں اچھا لگتا

شرم آتی ھے اس ابلاغ سے دل جانتا ھے
ھو چکا مجھ کو جو ازبر نہیں اچھا لگتا

جس کے ماتھے پہ نٸی صبح کا جھومر ھی نہ ھو
باخدا مجھ کو وہ اختر نہیں اچھا لگتا

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post