ڈاکٹرستیہ پال آنند بنام مرزاغالبؔ (۵)

آتش و آب و باد و خاک نے لی
وضعِ سوز و نم و رم و آرام

مرزا غالبؔ
۰۰۰۰
ستیہ پال آنند
واہ کیا منفرد ہے یہ ترتیب
“سوز” ہے” آگ” اور” نم” ہے “آب”
“باد “کا” رم” سےدوڑنا مقصود
“خاک “۔۔ٹھس، مُنڈ، بے حس و حرکت

مرزا غالب
ہاں، عزیزی، درست ہے ترتیب
آتش و آب و باد و خاک ہیں کیا؟
جسمیت، مادیت، خس و خاشاک
ما و طِین و طبیعیاتِ  زمیں
عنصری، چار دانگِ عالم میں
غیر شخصی زمین و کون و مکاں
ثقل ہو یا سبک ، کثیف و لطیف
اپنی بنیادمیں ہیں چار فقط

ستیہ پال آنند
خوب، لیکن ، حضور فرمائیں
غیر شخصی ہیں گر یہ چار اجزا
ہیں فقط مادیت کی ہی تجسیم
لا تعلق ہما شما سے ہیں
اور نہیں اثریت کا کوئی وجود

مرزا غالب
من وعن ہے، یہی سراپا کُل
ٹھیک سمجھے ہو تم یہ سیدھی بات
صرف اجزائے دیمقراطیسی
آتش و آب و باد و خاک سمیت
اِس جگہ، اُس جگہ، یہاں کہ وہاں
یہی نفس الامر ہے ، حرف بحرف

ستیہ پال آنند
آب’ نم‘، باد ’رم‘، و آتش ’سوز‘
خاک چسپیدہ ، ٹھس، فقط ’آرام‘
ہاں مگر آپ کا کلام، استاد
جذبہ و جوش کے ظوا ہر سے
رنج، دکھ، درد کے عناصر سے
سیر حاصل ، بھرا پُرا ہے، حضور

مرزا غالب
استعاروں، کنایوں، تشبیہیوں
ساز و پرواز شعر و حکمت کے
ہیں سبھی میری کلیت کا جواز
آب، آنسو ہیں، جلتے تپتے ہوئے (۱)
آب شبنم ہے، لمحہ بھر کی حیات(۲)
خاک سے کیا ہوا کا رشتہ ہے
جانئے گا تو رویئے گا، جناب ۔۔۔
’سوز‘ اور ’رم‘ سے ہے یہی مقصود! (۳)
آب‘، ’آتش‘ ، ’ہوا ‘ سے خاک تلک
ہے سبک گام زندگی ہر دم (۴)
’ہے ازل سے روانی ءآغاز(۵)
ہو ابد تک رسائی ء انجام

ستیہ پال آنند
واہ، استاد ، محترم میرے
کیسا ابداع، کیا مجددیت
کیا فضیلت ہے، کیا حداثت ہے
آپ کو میرا لاکھ لاکھ سلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۰کچھ حواشی
(۱) آتش پرست کہتے ہیں اہل، ِ جہاں مجھے : سر گرم ِ نالہ ہائے شرر بار دیکھ کر
۰(۲) پرتو ِ خور سے ہے شبنم کو فنا کی تعلیم: میں بھی ہوں ایک عنایت کی نظر ہو نے تک
۰(۳) مگر غبار ہوئے پر ہوا اُڑا لے جائے : وگرنہ تاب و توں بال و پر میں خاک نہیں
۰ (۴) ضعف سے گریہ مبدّل بہ دم ِ سرد ہو ا : باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا
۰ (۵) ہے مجھے ابر ِ بہاری کا برس کر کھُلنا : روتے روتے غم ِ فرقت میں فنا ہو جانا
۰(۶)اک شرر دل میں ہے اُس سے کوئی گھبرائے کیا : آگ مطلوب ہے ہم کو جو ہَوا کہتے ہیں
****************

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post