ڈاکٹرستیہ پال آنند بنام مرزاغالبؔ (۱۴)

دل و جگر میں پُر افشاں جو ایک موجہء خوں ہے
ہم اپنے زعم میں سمجھے ہوئے تھے اس کو دم آگے

مرزاغالبؔ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ستیہ پال آنند
حضور، اس شعر کی تصویر یہ بنتی ہے ذہنوں میں
کہ متموج ہے اک دریائے خوں دل اور جگر کے بیچ
یہی ہے اک نشانی سانس کی یا زندگانی کی
یہ ہم طرحی ۔۔۔۔

مرزا غالبؔ
بہت نا اہل ہو ، اے ستیہ پال آنند، پھوہڑ ہو
مرے اس شعر کا بھرتہ بنا کر رکھ دیا تم  نے

ستیہ پال آنند
میں اپنی بات پوری کر نہیں پایا تھا، اے استاد
اگر تشریح سُن لیتے تو میں بھی سرخرو ہوتا

مرزا غالبؔ
کہو، ہاں، میَں ہمہ تن گوش ہوں، تشریح تو سن لوں

ستیہ پال آنند
حضور اس استعارے کی ذرا تصویر تو دیکھیں
دل و جگر ہوں جیسے دو کنارے موجہء خوں کے
معالج سے اگر پوچھیں تنفس کا چلن کیا ہے
تو ’’شش‘‘ یا ’’پھیپھڑے‘‘ کا نام لے گا اس حوالے سے
جگر میں سانس کی یہ آمد و شد؟ کیا تمسخر ہے

مر زا غالبؔ
یہی ہے کیا تمہارا باز دعویٰ ، ستیہ پال آنند؟
بھلا کیا ’’پھیپھڑا ‘‘ بھی خوش بیانی کا نمونہ ہے؟
ریہ‘‘ بھی فارسی میں پھیپھڑے کا نام ہے، دیکھو’’
بہت بودے ہیں، بھدے ہیں، بہت ہی غیر متناسب
دل و جگر کے مقابل میں یہ الفاظ ناقص ہیں
سخن گو کا تکلم خوش بیانی کا نمونہ ہو
یہی ہے کلمہ جنبانی مری، یہی تقریر ہے، سمجھو
تمہارا پیش کردہ یہ نمونہ احمقانہ ہے
میں ایسی کج زبانی سے ہمیشہ دور رہتا ہوں

ستیہ پال آنند
معافی، بندہ پرور، میں فقط اتنا ہی سمجھا تھا
کہ معنی شرط ِ اوّل ہے، فصاحت ثانوی شے ہے
مگر یہ طے ہو ا دونوں میں جو اصلی توازن ہے
وہی اصلی قلمکاری ، ہنر مندی ، سلیقہ ہے

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post