ڈاکٹرستیہ پال آنند بنام مرزاغالبؔ (۱۱)

نہ جانوں کیوں کہ مٹے داغ طعنِ بد عہدی
تجھے  کہ  آئینہ بھی ورطہ ء ملامت ہے

غالبؔ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ستیہ پال آنند
حضور،مجھ کو تو جو کچھ سمجھ میں آیا ہے
اگر کہیں تو میں منجملہ اس کو پیش کروں

مرزا غالبؔ
ذرا بتاو تو کیا کوئی لفظ مشکل ہے؟

ستیہ پال آنند
نہیں،جناب، یہ الفاظ تو ہیں سب آساں
مگر ہے عندیہ ان کا منازعت کا سبب

مرزا غالبؔ
ذرا مجھے بھی بتائو یہ ’’عندیہ‘‘ کیا ہے

ستیہ پال آنند
جناب، غور فرمائیں تو اس تشاکل پر
کہ جو بھی شخص ہے اس شعرکے تخاطب میں
(روایتاً ہے جسے’’ـ معشوق‘‘ کہا جاتا ہے)
ہے اس کے چہرے پہ اک بد نما، بد رنگ سا داغ
یہ داغ جو کہ نشانی ہے عہد سوزی کی
عدم خلوص کی ۔۔یا۔۔ بد لحاظ ہونے کی
جتن ہزار کرے تو بھی مٹ نہیں سکتا

مرزا غالبؔ
درست ہے یہ تمہارا بیان، ستیہ پال
اب اور آگے چلو روئے آئینہ کی طرف

ستیہ پال آنند
کھڑا ہوا ہے اک آئینہ لیے یہ بد عہد
وہ اپنے چہرے کو جب آیئنے میں دیکھتا ہے
یہ داغ اس کو بھی اجبک دکھائی دیتا ہے
اسے یہ لگتا ہے جوں ہو کلنک کا ٹیکا

مرزا غالبؔ

اب اس کے بعد کہو، اور کیا سمجھتے ہو؟

ستیہ پال آنند
روایتاً تو یہ شاید درست ہو کہ نہ ہو
حقیقتاً ، مگر، بہروپیا ، یہ جھوٹا صنم
اس ایک جرمِ وفا پر بہت پشیماں ہے
حضور ، آپ کا مصرع دلیل ہے اس کی
’’تجھے کہ آئینہ بھی ورطہء ملامت ہے‘‘

مرزا غالبؔ
خوشا! صد آفرین، واہ، واہ، اے ستیہؔ پال
تمہاری شرح یقیناً ہے باعثِ تحسین
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post