Browsing Tag

ثمینہ سید

بنتِ حوا : ثمینہ سید

 سرد ہوا کے بدمست جھونکے گلی کوچے ویران کئے ہلا شیری سے دندناتے پھر رہے تھے۔لوگ اپنے گھروں میں انگیٹھیوں اور…

غزل : ثمینہ سید

جیسے کبھی دریا کے کنارے نہیں ملتے ایسے ہی تو جاں بخت ہمارے نہیں ملتے کھل جائے نہ تم پر یہ کہیں وصل کی خواہش ہم تم…