مری شاعری پڑھنے والوں کی آنکھیں سلامت رہیں : ڈاکٹرستیہ پال آنند

دعا بارگاہ حقیقی میں ہے یہ
مری شاعری پڑھنے والوں کی آنکھیں
سلامت رہیں تا کہ پڑھتے رہیں و ہ
سبھی پڑھنے والوں کے شوق وتجسس کی خاطر
مری طبع ِ تخلیق اُن کے لیےموتیوں کی یہ لڑیاں
پروتی رہےعمر ساری
میں لکھتا رہوں اپنی نظمیں
کہ لکھنا قلم کا وہ واحد عمل ہے
جو آواز کی حدِ فاصل سے آگے
بصارت کی سب کھڑکیاں کھولتا ہے

دعا بارگاہ ِ حقیقی میں ہے یہ
کہ جو بھی لکھوں میں
محبت کے لب دوز شہد و شکر میں
حلاوت کے امرت سے گوندھا ہوا ہو
سبھی کے لیےانگبیں ، اندرسہ ہو

دعا بارگاہ ِ حقیقی میں ہے یہ
مری شاعری میں بھروسہ، یقیں ہو
کہ پیغام ضبط ِ نفس کا، نجابت
کشادہ دلی ، سیر چشمی ، سخاوت کا
اس سے ملے، مشتہر ہو

یہی تو سبب ہے کہ جس کے لیے میَں
دعا گو ہوں، مولا
مری شاعری پڑھنے والوں کی آنکھیں
سلامت رہیں تا کہ پڑھتے رہیں وہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دعائے عافیت
خدایا، تری بارگاہ شفا بخش میں یہ دعا ہے
صیانت، فحانت، ایالت ہو
اے میرے مولا
یہاں ہر طرف زہر سا وائرس ہے
عفونت کا یہ لاڈلا زنگ کیڑا
ہےبد فال آفت، نزول ِ بلا ہے
یہ تہدید ہے اس تلاطم کی ، آفت کی
جو بے خبر آل ِ آدم پہ ٹوٹی ہے
اب اک برس سے

خدایا، کوئی دفع، احیا، مداوا
کوئی نسخہ ء خاص، درماں میسر ہو
جو اس عفونت کو ، آلودگی کو
بِسیلی ِسم آلود لعنت کو۔۔۔ جڑ سے اکھاڑے
ازالہ ہو اس کا

 

تمھاری بسائی ہوئی ساری دنیا
ہے خطرے میں اے میرےخالق
خمیدہ ہے معذور ہے، اس کو درکار ہے تیری طاقت
اسے بخش ہمت کہ یہ اس کو جڑ سے اکھاڑے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post