جو مجھ کو عورت بنایا ہوتا مرے خدا نے : ڈاکٹرستیہ پال آنند

 

میں کیسے اس بات کو سمجھتا

کہ اپنے مذہب کی رو سے میں نصف شخصیت ہوں
مرا حلف نامہ قاضی ٔ وقت کے لیے معتبر نہیں ہے
کہ صرف آدھا گواہ ہوں میں

۰۰۰۰۰میں کیسے اپنی شکست کا اعتراف کرتا
اگر مجھے اس حقیقت ِ ناروا کی بابت بتا یا جاتا
کہ جسم و جاں کا بہم دگر انسلاک شادی کا “سچ” نہیں ہے
کہ “عقد” کے سچ کی “عہد نامہ”سی حیثیت ہے
جسے تجارت میں واجبات و ادائگی ہی کہا گیا ہے

۰۰۰۰۰۰میں کیسے اس بے تکے عقیدے کو مان لیتا
کہ دو فریقین میں مجازی خدا ہے خاوند
کہ زوجگی کا فریضہ خاوند کی خادمہ جیسی حیثیت کا
کا حصول ہے، آخری نفس تک!

۰۰۰۰۰۰میں اس کو انصاف کیسے کہتا
کہ جیسا کیسا بھی یہ تعلق ہے مرد و زن کا
مرا مجاذی خدا
تین بار اک لفظ کی مکرر ادائی سے
ایک پل میں کوڑے کے ڈھیر پر پھینکنے کا حقدار
ہے مرے دین اور قانوں کے حوالے سے۔۔۔۔۔

جو مجھ کو عورت بنایا ہوتا مرے خدا نے
تو میں بغاوت کا اہل ہوتا
خدا سے ۔۔۔۔ یا اپنے شوہر ِ نامدار سے
جو خدا کے احکام کی صریحاً خلاف ورزی میں
مجھ کو املاک فرض کرتا ہے ۔۔۔۔
میرا مالک بنا ہوا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post