جانِ قرنطینہ : ڈاکٹرمعین نظامی

اے جانِ قرنطینہ، جانانِ قرنطینہ
اے روحِ مسیحائی، ایمانِ قرنطینہ

اس کلبہء احزاں میں اک شمع فروزاں ہے
یعنی تری چاہت ہے سامانِ قرنطینہ

دل دست و گریباں ہو کہتا ہے یہی مجھ سے
کیا مَیں ہی لگا تم کو شایانِ قرنطینہ

آنکھوں سے کہو جا کر فی الوقت یہ بہتر ہے
ہم پیشِ نظر رکھیں پیمانِ قرنطینہ

مجنوں مرے خیمے میں کل آ کے یہ کہتا تھا
اس دشت میں ہوں مَیں ہی پُرسانِ قرنطینہ

اے زلفِ پراگندہ، زنجیر کشائی کر
مجھ سے تو نہ ٹوٹے گا زندانِ قرنطینہ

واعظ نے یہاں پر بھی کیا خطبہ فروشی کی
یہ شخص بھی کیا شے ہے، نادانِ قرنطینہ

اس قحطِ تشکّر میں ہم شکر بجا لائے
نعمت ہی لگی دل کو بارانِ قرنطینہ

ہم خاص اسیروں کی ہے منتقلی ممکن
ہے کوچہء جاناں میں امکانِ قرنطینہ

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post