تمہارے ہاتھ میں ہاتھ : ستیہ پال آنند

کس قدر آہستگی سے،دھیرے دھیرے، چپکے چپکے
تم نے اپنے ہاتھ کو ہاتھوں میں میرے دے دیا ہے
پھول، شبنم، صبح کی پہلی کرن کا ایک جھُمکا
مخملی کافور، ٹھنڈی اور میٹھی آنچ جیسے
ہاتھ کا یہ لوچ، ریشم اور سنبل کے ملن سا!
تم نے اپنے ہاتھ کو ہاتھوں میں میرے دے دیا ہے
کس قدر آہستگی سے، دھیرے دھیرے، چپکے چپکے!
کل تمہیں اس کو اگر پیچھے ہٹا نا بھی پڑے، تو دیکھنا۔۔۔۔
۔۔۔۔یہ کام بھی آہستگی سے، دھیرے دھیرے ہو
کہ نازک کانچ سا بندھن
اگر جھٹکے سے ٹوٹے گا تو اس کا شور ہمسائے سنیں گے !
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۰۱؎ (ہسپانوی شاعرVicente Aleixandre کی نظم ’’تمہارے ہاتھ میں ہاتھ‘‘کی ایک سطر (ہسپانوی زبان میں(Mano Entregada ۔۔۔۔

منظوم ترجمہ نہ ہوتے ہوئے بھی۔ میر ی اس اردو نظم کی بیشتر پیکر سازی ہسپانوی نظم سے ماخوذ ہے۔ یہ نظم لگ بھگ 40 بر س پہلے لکھی گئی۔ س۔پ۔آ)

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post