برکھا رُت : اختر شیرانی

 

گھٹاؤں کی نیل فام پریاں ، افق پہ دھومیں مچا رہی ہیں
ہواؤں میں تھرتھرا رہی ہیں، فضاؤں کو گُدگُدا رہی ہیں
چمن شگفتہ ، دمن شگفتہ ، گلاب خنداں ، سمن شگفتہ
بنفشہ و نسترن شگفتہ ہیں، پتّیاں مسکرا رہی ہیں
یہ مینہ کےقطرے مچل رہے ہیں،کہ ننھےسیّارے ڈھل رہے ہیں
اُفق سے موتی اُبل رہے ہیں، گھٹائیں موتی لُٹا رہی ہیں
بہارِ ہندوستاں یہی ہیں، ہماری فصلوں کی جاں یہی ہیں
بہشتِ کوثر نشاں یہی ہیں، جو بدلیاں دل لُبھا رہی ہیں
نہیں ہے کچھ فرق بحر و برمیں، کھنچا ہے نقشہ یہی نظر میں
کہ ساری دنیا ہے اِک سمندر ، بہاریں جس میں نہا رہی ہیں
چمن ہے رنگیں ، بہار رنگیں ، مناظرِ سبزہ زار رنگیں
ہیں وادی و کوہسار رنگیں، کہ بجلیاں رنگ لا رہی ہیں
چمن میں اختر بہار آئی ، لہک کے صوتِ ہزار آئی
صبا گُلوں میں پکار آئی ، اُٹھو گھٹائیں پھر آ رہی ہیں

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post