بحضور عالی مقام حسین ابنِ علی : یوسف خالد

حوصلوں کی ایک زندہ داستاں ابنِ علی
عظمتوں کا ایک بحر بے کراں ابنِ علی
باوقار و باحیا و با وفا و با کمال
خوش لباس و خوش ادا و خوش بیاں ابنِ علی
محفل کون و مکاں میں سر بلندی کا امیں
جاں نثاروں کی زمیں کا آسماں ابنِ علی
فاطمہ کا لال،حیدر کا پسر،سبطِ رسول
کشتیءِ دین خدا کا بادباں ابنِ علی
صورتِ بادِ بہاری بر سرِ بزمِ یقیں
کفر کے رستے میں اک کوہِ گراں ابنِ علی
جذبہء شوق شہادت سے مزین کارواں
صاحبِ کردار،میر کارواں ابنِ علی
بارگاہِ حق میں جاں دے کر ہوا ہے سرخرو
ابتدا و انتہا کا رازداں ابنِ علی
زندگی کی دھوپ میں جلتی سلگتی راہ پر
ہر بشر کے واسطے ہے سائباںِ ابن علی
اس لیے زندہ ہے خالد دہر میں دینِ مبیں
دے گیا ہے کربلا میں امتحاں ابنِ علی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post