آپ کا نام پکارا گیا ہے : ستیہ پال آنند

دھندھ ہے چاروں طرف پھیلی ہوئی
میں بھی اس دھندھ کا کمبل اوڑھے
سر کو نیوڑھائے ہوئے بیٹھا ہوں
میں اکیلا ہی نہیں ہوںکہ یہاں اور بھی ہیں
منتظر اپنے بُلاوے کے لیے
لپٹے لپٹائے ہوئے’خود ‘ میں
اکیلے، چپ چاپ
جامد و ساکت و بے جان بتوں کی مانند
سر کو نیوڑھائے ہوئے بیٹھے ہیں!
کچھ سے برسوں کی شناسائی ہے
میرے ہم عمر ہیں، میں جانتا ہوں
برق رفتار تھے سب بادیہ پیمائی میں
میری ہی طرح قدم زن تھے، سبک رو تھے یہ لوگ!
آج گم صم سے یہاں بیٹھے ہیں
خستہ، درماندہ، تھکے ہارے، نڈھال
سانس پھولے ہوئے، بے دم ، ہلکان
میری ہی طرح جفا کش تھے، جیالے تھے یہ لوگ!
کہیں پیچھے سے کوئی کندھا ہلاتا ہے مرا
اور تاکید سے کہتا ہے، ’’حضور اٹھئے تو
آپ کا نام پکارا گیا ہے

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post