یہی بہُت ہے کہ لب سی رکھو ،صفائی نہ دو : ڈاکٹرخورشیدرضوی

یہی ہے عشق کہ سَر دو ‘ مگر دُہائی نہ دو
وفُور ِ جَذب سے ٹُوٹو ‘ مگر سُنائی نہ دو

یہ دَور وہ ہے کہ بیٹھے رہو چراغ تَلے
سبھی کو بزم میں دیکھو ‘ مگر دِکھائی نہ دو

زمیں سے ایک تعلُّق ہے نا گُزیر مگر
جو ہو سکے تو اِسے رنگ ِ آشنائی نہ دو

شہَنشَہی بھی جو دل کے عِوَض مِلے تو نہ لو
فراز ِ کوہ کے بدلے بھی یہ تَرائی نہ دو

جواب ِ تُہمت ِ اَہل ِ زمانہ میں ‘ خُورشیدؔ !
یہی بہُت ہے کہ لب سی رکھو ‘ صفائی نہ دو !

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post