بس تیرا عشق ہی رسواٸی کا موجب ٹھہرا :عتیق اختر افغانی

رفتہ رفتہ میری تنہائی کا موجب ٹھہرا
بس تیرا عشق ہی رسوائی کا موجب ٹھہرا

مجھ کو سر سبز نظر آیا خزاں کا موسم
اک تصور میری رعنائی کا موجب ٹھہرا

کس کاجلوہ تھا میرے سامنے معلوم نہیں
زاویہ دید کا انگڑائی کا موجب ٹھہرا

بام پر اس نے جو لہرایا وہ آنچل اپنا
صبحِ نو کے لیے پروائی کا موجب ٹھہرا

اس محبت میں جو نفرت کو پرویا میں نے
پھر وہ کردار تماشائی کا موجب ٹھہرا

اس کے افکار کا ھر فلسفہ بیکار ھوا
ایک آوارہ جو دانائی کا موجب ٹھہرا

اس سے اختر میری پہچان نہ ھو پائی مگر
کوٸی تھا قافیہ پیمائی کا موجب ٹھہرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post