محبت : فریدہ غلام محمد

آج ٹھنڈ کچھ زیادہ تھی ،اس نے آتشدان میں اور لکڑیاں ڈالیں ۔۔۔کھڑکیوں کے پٹ اچھی طرح بند کیے اور ویلویٹ کے پردوں کو آگے کر دیا ۔۔۔۔کمرے کے سارے بلب روشن کر دیے ۔۔۔۔درس دے کر وہ ابھی فارغ ھوئی تھی ۔۔۔دفعتا”دروازہ کھلنے کی آواز آئی ۔۔۔۔۔اسے پوچھنے کی ضرورت ہی نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔اس کی آہٹ کو دور سے پہچان لیتی تھی ۔۔۔دل کی دھڑکن آج بھی قابو میں نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔آنکھیں دروازے پر تھیں ۔۔۔۔۔۔تنہائی نے چپکے سے اسے الوداع کہا ۔۔۔ وہ اندر آ چکا تھا ۔۔

’’ بسم اللہ ۔۔۔۔ آئیں یہاں آکر بیٹھیں ‘‘ ۔۔۔اس نے سکندر کا ہاتھ پکڑا اور آتش دان کے قریب پڑے موڑے پر بٹھا دیا۔۔۔۔۔۔ ۔ ہاتھ کیسے ٹھنڈے ھو رہے ہیں اس نے جلدی سے دوپٹے کو دور سے گرم کر کے اس کے ہاتھوں پر پھیرا۔۔۔۔  ’’ مومی دعا نہ سلام‘‘ اسکی آواز میں حیرت نہیں مگر گلہ تھا ویسے تو اسے پتہ تھا ۔۔۔۔اب گرم پانی کا ٹب لائے گی اس کے پاؤں گرم پانی میں رکھے جائیں گے ،اس کے بعد تولیے سے صاف ھوں گے ۔۔ پھر گرم گرم کھانا ۔۔۔ چائے اور پھر وہ اسکا ہاتھ پکڑیں گے ۔۔۔۔۔اس کی نرماہٹ کو محسوس کریں گے تب وہ ان کے شانے پر سر رکھ دے گی ۔۔۔۔۔آنسو کی نمی محسوس ھو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر ایک ہی سوال ھو گا۔۔۔۔۔

’’سکندر مجھ میں کیا کمی تھی ۔۔۔۔دیکھو میری جانب کانچ جیسی بادامی آنکھیں ۔۔۔ یہ دیکھو گھنیری زلفیں ۔۔۔ مومی ہاتھ پاؤں ۔۔۔۔۔مترنم آواز ۔۔۔۔ سلجھاؤ ،سبھاؤ ۔۔ جو تمہارے لئے ہی تھا اور ھے ۔۔۔۔۔ہم نے تو زندگی کا بہت عرصہ ساتھ گزارا۔۔۔ میری بات بن کہے سمجھنے والے تم یہ کیوں نہ سمجھ سکے میں تم کو کسی کے ساتھ شیئر نہیں کر سکوں گی تم تو میرے دیوتا تھے ۔۔میں پجارن۔۔۔۔۔ کوئی اپنی پجارن کے ساتھ ایسا کرتا ھے ۔۔ میری امیدوں کے سارے چراغ یکلخت کیوں بجھا ڈالے ۔۔۔۔۔ اس کی تڑپ ،سسکیاں ۔۔ یہاں سے جانے کے بعد بھی سنائی دیتی تھیں مجھے۔۔۔۔۔۔سکندر۔۔۔۔ ‘‘

میں چونکا ۔۔۔۔ آج اس نے کچھ بھی نہیں کہا ۔۔ کھانے کے دوران بھی وہ چپ تھی۔۔فیروزی لباس میں نظر لگ جانے کی حد تک خوبصورت لگ رہی تھی ۔۔جب میری اس سے شادی ھوئی تو یہ بیس سال کی تھی اور بیس سالوں کے بعد بھی اتنی ہی دلکش اورمعصوم تھی۔۔۔۔ آؤ تمہیں وہ کمرہ دکھاؤں جس میں درس دیتی ھوں ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ مسکرائی۔میں مسکرا بھی نہیں سکا وہ آج کچھ ہٹ کر لگ رہی تھی آج وہ روئی نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔وہ تو باوری تھی،دیوانی تھی ،مستانی تھی،اس کا بس چلتا تو میرے اردگرد چکر لگاتی رہتی ،جھومتی رہتی ۔۔۔۔ مگر ۔۔۔اندر آ جاؤ میری سوچوں کا تانا بانا ٹوٹ گیا ۔۔۔جوتے اتار کے آنا ۔۔۔۔اوہ میں نے جوتے اتارے اور اندر چلا گیا ۔۔۔اس کمرے کو دیکھ کر میں مبہوت ھو گیا۔۔۔۔ہلکے نیلے رنگ کا قالین ۔۔۔اسی کے ہم رنگ پردے ۔۔۔قالین پر رکھے فلور کشن ۔۔۔ایک طرف جاءنمازیں اور سپارے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہلکی ہلکی سی مہک شاید ۔۔مولسری کے پھولوں کی۔۔۔۔۔۔۔ایک چھوٹے سے شیشے کے میز پر پھولوں سے بھرا گلدان ۔۔۔اچھا ھے نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ۔۔۔بہت خوبصورت، پاکیزہ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آو یہاں بیٹھ کر باتیں کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے دو فلورکشن آمنے سامنے رکھ دیئے تھے ۔۔۔۔۔۔ہیٹر آن کر دیا تھا ۔۔۔۔وہ میرے سامنے بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔ اف وہ کوئ الپسرا لگ رہی تھی ۔۔۔۔ بال بکھر کر چہرے کو چھو رہے تھے ۔۔۔۔۔۔

’’تمہیں یاد ھے ۔۔۔۔ جب ایک دن ایسے ہی موسم میں تم نے مجھے کہا تھا ۔۔۔ مومی مجھ سے شادی کرو گی ۔۔۔اور میں نے بغیر توقف کے کہا تھا ۔۔۔ہاں ۔۔۔ اور کیوں نہ کہتی تم میری پہلی اور آخری محبت تھے ۔۔۔۔ میری زندگی میں والدین کے بعد تم تھے ۔۔۔۔۔ تم ہنستے تھے تو مجھے لگتا تھا ۔۔ ساری کائنات مسکرا رہی ھے ،تم چپ ھوتے تھے تو رونق کے باوجود سناٹا۔۔۔۔ میں بےچین ھو جاتی ۔۔۔۔۔۔ تم کالج جاتے تو میں خود کو جتنا بھی مصروف رکھتی ۔۔وقت کاٹے نہیں کٹتا تھا ۔۔۔ پھر ہماری شادی ھو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔‘‘

وہ چپ ھو گئی ۔۔۔  پھر مومی۔۔۔؟۔۔

’’ بس زندگی حسین ھو گئی ۔۔۔۔۔۔لگتا تھا میں دنیا میں کہاں بہشت میں ھوں ۔۔۔۔۔ پھر تم باہر چلے گئے ۔۔۔۔تب بھی میں دکھی نہیں ھوئی ۔۔۔۔تم مزید پڑھنا چاہتے تھے ۔۔۔۔۔میرا یونیورسٹی میں داخلہ کروا کے چلے گئے ۔۔۔۔۔ پتہ ھے ایک رات بہت تیز جھکڑ چلے ۔۔۔۔۔۔۔گھبرا کر اٹھی تو پہلے  تمہارا نمبر ملایا ۔۔۔۔۔تمہاری جگہ کسی لڑکی کی آواز نے میری روح ،جسم سے نکال دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے نہیں پتہ میرے اندر کا طوفان زیادہ تھا یا باہر کا۔۔۔۔تم نے مجھے یہ کبھی نہیں بتایا ۔۔۔۔۔۔میں نظریں۔ نہ ملا سکا ۔۔۔۔۔۔میرے پیا۔ میرے سکندر میں نے تم سے عشق کیا تھا ۔۔۔ میں نے تمہارا نام لکھ کر دل کے کواڑ مضبوطی سے بند کر دئیے تھے۔۔۔۔۔ میں تو جوگن تھی تمہاری ۔۔۔۔تم میرے محبوب تھے ۔۔ میرا جی چاہتا تھا تم بیٹھے رہو اور میں تمہارے چاروں اطراف رقص کرتی رہوں مگر ھوا کیا ۔۔۔تم نے میرے ساتھ دس سال گزارے اور مجھے بتائے بغیر کسی اور کو اپنا لیا ۔۔ تم بھنورے تھے اور میں باوری ۔۔۔۔۔میں نے تو کبھی اپنی صورت آئینے میں دیکھی ہی نہیں ۔۔ جب بھی دیکھا تم نظر آئے ۔۔۔۔۔۔ مگر دیکھو ۔۔۔ میں پاگل نہیں ھوئی ۔۔۔۔۔۔تم کو تو کیا سارے گاؤں کو یاد ھو گا مریم نے اپنی سوتن کا استقبال کیسے کیا تھا ۔۔’’

وہ آنکھیں بند کیے شاید ماضی میں چلی گئی اور میں بھی اس کے ہمراہ ھو گیا۔۔مجھے یاد ھےجب میں نے گھر بتایا تو کسی نے مجھے کچھ نہیں کہا ۔۔۔۔۔۔۔حیرت تب ھوئی جب میں عنایہ کے ساتھ گھر پہنچا تو منڈیروں پر چراغ جل رہے تھے ۔۔۔۔؟بڑے بڑے فانوس راستے میں آویزاں تھے ۔۔۔۔۔۔۔عنایہ نے مجھے کہا ۔۔تم تو کہتے تھے بہت ہنگامہ ھو گا ،تمہاری پہلی بیوی بہت شور ڈالے گی ۔۔۔۔۔چپ کرو مجھے خود بھی سمجھ نہیں آ رہی ۔۔۔۔۔۔ہم دونوں گاڑی سے اترے تو سب نے پھولوں کے تھال تھامے ھوئے تھے اور میرا دل دھڑکنا بھول گیا ۔۔ دروازے پر وہ کھڑی تھی ۔۔۔۔۔ سفید رنگ کی پشواز میں ہار سنگھار کر کے وہ کھڑی تھی آؤ عنایہ۔ اس نے اسکا ہاتھ تھاما ۔۔۔۔ تم پریشان نہ ھو سکندر ۔۔یہاں مجھ سمیت سب خوش ہیں۔ وہی مترنم آواز ۔۔۔وہی بانکپن ۔۔ یااللہ یہ کیا ھے ؟وہ ٹھیک تو ھے ۔۔۔۔۔ کہیں صدمے میں تو نہیں۔۔۔۔میں اس سے بات کرنا چاہتا تھا مگر وہ موقع نہیں دے رہی تھی ۔۔۔۔ عنایہ کو سجے سجائے کمرے میں بٹھا کر ہم سب بیٹھک میں بیٹھ گئے ۔۔۔۔ اک خاموشی تھی جو باتیں کر رہی تھی تب ہی وہ بولی ۔۔۔ ہم میں سے کوئی بھی تم سے خفا نہیں ھے ۔۔۔ تم جانتے ھو ہم سب تم سے محبت کرتے ہیں ۔۔ اس لئے ہم بس تم کو خوش دیکھنا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔ میں نے گھبرا کے بابا کو دیکھا ۔۔۔ وہ مجھے ہی دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔نجانے کتنے گلے تھے ان کی اس نظر میں ۔۔۔۔اگر مریم ہمیں اپنی محبت کا واسطہ نہ دیتی تو شاید تو زندہ نہ رہتا بس سب پر ظاہر کرنا تھا ھو گیا کل چلے جانا ۔۔۔۔۔۔۔انھوں نے اماں کا ہاتھ پکڑا اور باہر نکلے ۔

رکو مومی ۔۔۔۔میری آواز میں اضطراب تھا ۔۔۔دیکھو پیارے۔۔۔وہ گھوم کر میرے سامنے آ گئی ۔۔۔۔میں آج بھی تم سے ہی محبت کرتی ھوں ۔۔۔۔ میں نے لین دین رکھا ہی نہیں۔ ۔۔۔۔۔جاو عنایہ کیا سوچے گی ۔۔۔۔۔اس نے کہا مگر میں ھوش میں کہاں تھا ۔۔۔۔ اتنا حوصلہ ،اتنا صبر ۔۔۔اتنی محبت ۔۔۔۔۔۔۔۔مومی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومی نہیں عنایہ یہ کہہ کر وہ رکی نہیں ۔۔۔۔نجانے کتنی دیر سر تھامے میں بیٹھا رہا ۔۔اس کی آواز مجھے حال میں لے آئی ۔۔۔وہ لمحات میں بھول نہیں سکتی ۔۔ میں بھی، جب اتنا سہہ لیا تھا تو معاف بھی کر دیتی ۔۔عنایہ تو مجھے چھوڑ کر واپس چلی گئی دس سال سے معافی مانگ رہا ھوں ۔۔۔۔۔ تم ھو کے معاف ہی نہیں کرتی ۔۔۔۔۔۔ہر سال آتا ھوں یہ سوچ کر اب کی بار معاف کر دو گی تو اکٹھے چلیں گے میں بہت تنہا ھوں مومی ۔۔۔ تنہا تو میں بھی ھوں یہ کہہ کر اس نے سر جھکا لیا ۔

’’میں سوچتی ھوں اتنی اللہ سے محبت کی ھوتی تب تو آج کیا عالم ھوتا۔‘‘اس نے زیر لب کہا تھا ۔۔۔ اچھا اب اٹھو مجھے نیند آئی ھے ۔۔۔میں نے اس کا ہاتھ پکڑا ۔۔۔۔میں نماز پڑھ لوں پھر چلتے ہیں ۔۔۔۔۔ اچھا۔۔۔ وہ نماز پڑھ کر نجانے کتنی دیر دعا مانگتی رہی ۔۔۔۔۔۔جب ہم کمرے کی طرف جا رہے تھے۔۔تو میں نے اس سے پوچھا ۔۔کیا مانگتی ھو دعا میں ۔۔۔ بس سب کی خوشیاں مانگتی ھوں اور ایک دعا شاید پوری نہ ھو ۔۔۔اب وہ کمرے میں جا کر میز سے کاغذ اٹھا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہارا تو اللہ جی سے یارانہ ھے کیوں نہیں ھو گی پوری ۔۔۔ میں مسکرایا ۔۔۔۔۔ میں کہتی تھی یااللہ مجھے سہاگن کی موت دینا اور میرا سکندر مجھ کو لحد میں اتارے ۔۔۔۔۔۔ اس سے پہلے میں کچھ کہتا ۔۔ اس نے کاغذ میرے ہاتھ میں تھمائے ۔

’’یہ طلاق کے کاغذ ہیں مجھے آزاد کر دو ‘‘

پتہ نہیں وہ رو رہی تھی یا مجھے لگا لیکن میری حالت غیر ھو چکی تھی ۔۔۔ نہیں مومی میری سزا ختم کر دو ،مجھ سے بھول ھوئی ۔۔۔۔۔۔مگر میں تمہارے بغیر ایک پل سکون سے جی نہیں سکا ۔

’’ میری محبت پاک تھی ۔۔۔۔۔۔۔سچی تھی میری پوری زندگی تھی ۔۔۔۔۔۔ مگر تم نے میری تضحیک کی ۔۔،تم نے میری محبت کا مذاق اڑایا تم نے میری مسکراہٹ دیکھی ۔۔ میرے زخم نہیں گنے ۔۔۔۔ شراکت کیسے کی میری محبت میں ۔‘‘ شاید زندگی میں پہلی بار وہ چلائی ۔

وہ بلک بلک کر رو رہی تھی ۔۔۔۔۔ نجانے کب تک روتی رہی ۔۔۔ میں نے جب بھی اس کی طرف ہاتھ بڑھایا ۔۔۔۔ اس نے جھٹک دیا۔

’’ کوئی بھی عنایہ جھٹک دے گی تو تم میرے پاس آؤ گے ۔۔نہیں چاہیے مجھے لمحوں کی بھیک ۔۔۔ پجارن سے بھکارن بنا دیا تم نے ۔مجھے ۔۔۔ میرے اٹھنے سے پہلے ان کاغذوں پر دستخط کر کے چلے جانا۔۔۔۔۔اب سو جاؤ ۔‘‘

وہ کچھ اسطرح کہتی ۔۔ بات مانے بغیر کوئی چارہ نہ ھوتا۔۔ صبح نہیں ھوئی تھی میں غنودگی میں تھا شاید وہ نماز پڑھ رہی تھی ۔۔۔اس کے بعد میری پیشانی پر اس کے نرم لبوں کا لمس محسوس کیا میں نے ۔۔وہ کہہ رہی تھی میں نے تمہیں معاف کیا ۔۔ پھر جیسے روح میں ایسا سکون اترا کہ نیند نے پوری طرح اپنی آغوش میں لے لیا آنکھ کھلی تو چونکا ۔ میرا ہاتھ پکڑ کر سو رہی تھی ۔۔۔ مومی اٹھو دیکھو کتنی دیر ھو گئی ھے ۔۔۔ اس کا ہاتھ ٹھنڈا تھا۔ میں نے گھبرا کر اس کی نبض پر ہاتھ رکھا اور میری سانس رک سی گئی ۔

مجھے نہیں معلوم کیا کیا ھوا بس یاد ھے تو اتنا میں نے اپنی مریم کو خود لحد میں اتارا۔ میں تو شاید ساتھ دفن ھو جاتا اگر لوگ مجھے نہ نکالتے۔ اس کے چہرے پر مسکراہٹ تھی ۔۔ اللہ پاک نے اس کی ریاضت،اس کی دعا قبول کر لی تھی۔وہ سہاگن تھی ،میرے ہی ہاتھوں لحد میں اتری تھی سب جا چکے تھے مگر میں اس کی لحد پر سر رکھے رو رہا تھا ۔۔ اس نے مجھے محبت کے معنی سمجھا دیے ۔

محبت بھی توحید ہی کی طرح ھوتی ھے سکندر جیسے رب ایک ،ایسے محبوب ایک وگرنہ وہ محبت ہی نہیں ۔شرک رب معاف نہیں کرتا ۔۔۔۔۔اسی طرح کسی اور کی شراکت داری محبت معاف نہیں کرتی ۔۔۔۔۔۔ میں رو رہا تھا ۔۔۔۔ تب دور کہیں اذان ھوئی میں اٹھا اور مسجد چل دیا۔ جاتے جاتے وہ مجھے رب کے حوالے کر گئی تھی۔

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post