حج ۔۔۔۔۔ فریدہ غلام محمد

شہر دل کے سب دروازے بند ہیں پھر بھی یادوں نے کوئی سرنگ کھود لی ھے بڑی خاموشی سے محاصرہ کر لیا ھے  میں نے سارے دروازے دیکھے ،سب بند ہیں . مگر یادیں ہیں کہ چلی آ رہی ہیں .مجھے ہرا کے خوشی ملی ھے تو ٹھیک ھے مجھے ہار قبول ھے بھلا یادوں کے آگے کیسے پل باندھا جائے۔

ابھی تین گھنٹے پہلے میں نے دروازہ کھٹکھٹایا تھا۔۔۔ایک لڑکے نے جھانکا ۔۔۔وہی شربتی آنکھیں ،لانبا قد،سنہرے بال ۔۔جی فرمائیے اس کی آواز بھی ویسی ہی تھی ۔۔۔۔۔بیٹا میں بڑی دور سے آئی ھوں ۔۔۔۔۔۔۔موسم خراب ھے ۔۔۔۔صرف ایک رات کے لئے ۔۔۔۔۔۔ٹھہریے اس نے مجھے مزید بولنے سے منع کر دیا اور حیرت تو تب ھوئی جب اس نے دروازہ کھول دیا ۔۔۔۔’’آپا ان کو ایک رات کا ٹھکانہ چاہیے ‘‘ ۔۔۔۔۔۔اس نے قدرے اپنے سے بڑی لڑکی سے کہا ۔۔۔۔۔خیال رہے کہا ،پوچھا نہیں اس لڑکی نے مجھے غور سے دیکھا ۔۔۔انکھوں پر عینک ۔۔۔۔چادر میں ڈھکا وجود ۔۔۔۔۔ہاتھ میں چھوٹا سا بیگ ۔۔میں اسکو دیکھ ہی نہیں رہی تھی ۔۔۔میں تو دالان میں الجھ گئی تھی ۔

’’ بابا۔۔اس کھڑکی کے ساتھ بوگن ویلیا کی بیل کیسی لگے گی‘‘ ۔۔۔۔۔بہت اچھی ابھی منگوا لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔اوہ پیارے بابا ۔۔۔۔ادھر چنبیلی اور ادھر گلاب ۔۔۔۔ مگر اب وہاں صرف سکھ چین کا درخت باقی تھا ۔۔۔۔۔ہیلو آنٹی ۔۔۔۔۔لڑکی نے مجھے یادوں کے بہتے دریا سے حقیقت کے کنارے لا کھڑا کیا ۔۔۔۔۔۔۔اس نے بیگ پکڑ لیا ۔۔۔۔اور کوئی نہیں رہتا یہاں ۔۔۔۔۔ماما بابا حج پر گئے ہیں اپیا کی شادی ھو چکی اب ہم دونوں ہیں یا بوا وہ بھی اپنے گھر گئی ھوئی ہیں ۔۔پرسوں لوٹیں گی ۔۔۔۔۔۔۔پرسوں ۔میں نے زیر لب کہا۔۔۔۔۔۔یہ لیجئے آپ اس کمرے میں رہ سکتی ہیں اور کھانے میں جو چاہیے بتا دیں مل جائے گا ۔۔۔ ابھی نہیں ۔۔۔میں آنکھوں کی پیاس تو بجھا لوں ۔۔۔۔۔۔لڑکی کے جانے کے بعد اس نے دروازہ بند کر لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔

’’میرے بابا ۔۔ ماں ‘‘ میں دیوانہ وار ان کی تصویروں کو چوم رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔بابا مجھے یہی سونا ھے ۔۔۔باہر بادل گرج رہے ہیں سنائی دے رہا نا آپکو بھی ۔۔۔۔ موٹے موٹے آنسو گرے جنھیں بابا نے جلدی سے صاف کیا ۔۔۔۔۔۔۔آو وہ ماں کے ساتھ مجھے جگہ بنا کر دیتے میں نے بستر پر ہاتھ پھیرا ۔۔پائنتی پر ہاتھ پھیرتی رہی جیسے ان کے پاؤں چھو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہی سنک ۔۔۔۔۔۔۔۔وہی ڈریسنگ روم ۔۔۔۔اور الماری کھلی تھی ۔۔۔۔۔۔میں نے لرزتے ہاتھوں سے الماری کھولی ۔۔۔۔۔وہی خوشبو ۔۔۔۔کچھ خالی پرفیوم کی شیشیاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومال ۔۔۔۔۔۔۔۔گھڑی ۔۔۔۔مہر ۔۔۔۔ڈائری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے وارڈ روب کھولی ۔۔۔۔۔۔ یہ کلر آپ کے لئے بنا ھے بابا ۔۔۔۔ ڈارک بلیو ۔۔ہاں جی ۔۔۔۔ نہیں نہیں سارے رنگ آپ کے لئے بنے ہیں بابا ۔۔۔۔ اور اماں کے لئے ۔۔۔۔۔ ابھی سوچا نہیں میں نے اماں کو شرارت سے دیکھا ۔۔۔۔وہ مسکرائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔بابا آپکا ماتھا چوم لوں ۔۔ ہاں کیوں نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے جلدی سے لکڑی کا ڈبہ رکھا اس پر چڑھ کر بابا کی پیشانی چوم لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے آنسو اب تواتر سے بہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔ میں نے ایک پرفیوم کی شیشی،ایک رومال ،ایک پین اور بابا کا ایک سوٹ بیگ میں رکھا اور کمرے میں آ کر بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سردی میں بھی دل چاہا پچھلے صحن کی کھڑکی کھول کر دیکھوں وہ دو سفیدے کے درخت ہیں کہ نہیں ۔۔۔۔۔۔اور میری حیرت کی انتہا نہ رہی وہ اپنی جگہ ایستادہ تھے ۔۔۔۔۔۔۔ارے آپ یہاں کیا کر رہی ہیں؟اس لڑکے کی آواز پر میں پلٹی ۔۔۔۔۔۔بس گرمی لگ رہی تھی ۔۔۔۔اوکے آپ آ جائیں کھانا لگ گیا ھے ۔۔۔ میں اس کے پیچھے تھی مگر نجانے کب اس سے آگے چلی گئ سکون سے لاونج سے گزری ۔۔۔۔اور ڈائننگ روم میں آگئ ۔۔ وہاں قدرے تبدیلیاں تھیں مگر ٹیبل وہی تھا ۔۔۔۔ بابا اس ٹیبل کی قیامت تک گارنٹی ھے نا ۔۔۔ میں شرارت میں ہنستی ۔۔۔۔ میں بابا والی سیٹ پر بیٹھ گئ۔۔۔۔ارے آنٹی اگر برا نہ مانیں تو اس کرسی پر آ جائیں ۔۔۔۔۔میں نے سوالیہ۔ نظروں سے دونوں کو دیکھا ارے بیٹھی رہیں یہ پاگل ھے ۔۔۔۔۔نہیں کوئی وجہ تو ھو گی ۔۔۔۔ میں نے پلیٹ اٹھاتے ھوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ ہمارے داداجان کی کرسی ھے یہ خالی رہتی ھے ۔۔۔بابا کسی کو نہیں بیٹھنے نہیں دیتے ۔۔۔۔اوہ اچھا ۔۔۔۔۔۔۔میں مسکرائی۔ تم زوبی کو نہ بتانا ۔۔۔۔۔۔۔ پھر میرا رنگ ان دونوں کے ساتھ ہی اڑ گیا ۔۔۔آپ کو بابا کا نام کیسے پتہ ۔۔۔۔۔باہر لکھا ھوا تھا اب میں اطمینان سے کھانا کھا رہی تھی ۔                   میں تمام رات جاگتی رہی ۔۔۔۔اماں میرے پاس تھیں نجانے کتنا انتظار کر رہی ھوں گی ۔۔۔۔۔۔ میں اٹھی ۔۔۔۔۔۔وہی فجر کی اذان ۔۔۔۔وضو کیا نماز پڑھی اور بیگ اٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔بابا کی تصویر کے نیچے خط رکھا ۔۔۔۔۔رکھنے سے پہلے ایک نظر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بچو مجھے ایک رات گھر میں جگہ دی تم نہیں جانتے میں نے اپنی ساری زندگی جی لی۔۔۔۔خوش رہو اور خاموشی سے باہر نکلی ۔۔۔۔۔۔۔۔لڑکے کی آواز نے میرے قدم روک دئیے ۔۔۔۔۔۔کیا انھیں روکوں ۔۔۔۔۔ نہیں بابا وہ پھپھو نہیں ہیں ۔۔۔۔۔۔وہ ایک مسافر ہیں اور بس ۔۔ میں تیزی سے باہر نکل آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہانی تو عام سی تھی ،بھابھی کو اماں سے بیر تھا میں اپنے گھر لے آئی یہاں میرے میاں کو اماں سے اللہ واسطے کا بیر تھا مگر میں نے اماں کو کبھی تکلیف نہیں ھونے دی ، بابا کی قبر پر تو پہلے بھی جاتی تھی آج دل مچل گیا تھا کہ اپنے گھر کو دیکھوں ۔۔۔اماں ۔۔بابا کی نشانیاں مانگ رہی تھیں وہ بھی لیتی آئی مگر سوچ رہی ھوں ۔۔۔۔بھائی کس حج پر گیا ھے ۔۔۔ ماں تو یہیں ھے ،دکھی ھے،خفا ھے۔۔۔۔۔ میں نے آنسووں کو صاف کیا اور وین پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔میں۔۔ یادوں اور حقیقتوں کے بیچ میں بڑی لاچاری سے کھڑی تھی۔

You might also like
  1. Hammad says

    بہت خوبصورت تحریر ہے جو کہ حقیقت کا عکس بیان کرتی ہے یہ تحریر پڑھنے والے کو اپنے اندر مگن کر دیتی ہے جیسے وہ بھی اس اہم کردار کے ساتھ چل رہا ہو اور سب کچھ اپنی آنکھوں سے دیکھ رہا ہو اور اس کے جذبات کو محسوص کررہا ہو۔ شکریہ

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post