ترنے پے گئے کھال نی مائے۔۔۔ افضل احسن رندھاوا

افضل احسن رندھاوا

انج ہالوں بے حالَ نی مائے
بھلّ گئی اپنی چال نی مائے
اونے پھٹّ میرے جسے تے
جنے تیرے وال نی مائے
دوزخ تیتھوں دوری ، جنت
تیرے آل دوال نی مائے
ہن تے کجھ نئیں نظریں آؤندا
ہور اک سورج بال نی مائے
میں دریاواں دا ہانی ساں
ترنے پے گئے کھال نی مائے
میری چنتا چھڈّ دے، ایتھے
رلدے سبھ دے بال نی مائے
میرا متھا چمیاں تینوں
ہو گئے چوی سال نی مائے
ہر چھوٹی وڈی آفت وچ
توں سیں ساڈی ڈھال نی مائے
افضل احسن لوہا سی، پر
کھا گیا درد جنگال نی مائے

You might also like
Loading...