کُچھ دوھے : خاور چودھری

انتر باہر وارتا ، ہر جذبہ لے بھانپ
سارے پوت کپوت دے ، ماٹی میّا ڈھانپ
O
توری جھولی چھیکلا ، پگ پگ تو پھیلائے
لوبھی بھکشو دھیرتا ، دھیرج ہی کام آئے
O
چھوڑ سمے کی بات رے ، یہ مٹھی کی دھول
اوگن اپنے یاد رکھ ، گُن سارے تو بھول
O
تُمری بتیاں اے سکھی ! یاد آوت دن رین
جگ جگ گھومتا گیگلا ، پل بھر ناہی چین
O
سچ کہوت ہو بالما ، ہمری پیت ہے جھوٹ
تم بن جیون روستا ، ہردے جائے ٹوٹ
O

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post