اُداس شامیں : فریدہ غلام محمد

ایک وقت تھا جب شامیں اداس نہیں لگتی تھیں ۔۔۔۔مجھے خبط تھا گھر کے سارے بلب جلا دوں اور میں بھاگتی پھرتی ۔۔۔بلب روشن کرنے کے لئے ۔۔۔۔۔ارے دیکھیں دادی ۔۔۔۔وہی منظر ھے نا ۔۔میں دادی جان کے پاس آ کر کہتی ۔۔۔۔۔۔ان کی آنکھوں میں نمی سی آ جاتی ۔۔۔۔۔۔رونا نہیں پلیز۔۔۔۔۔۔۔۔میں بابا سے کہہ دوں گی وہ کل آپ کو گاؤں چھوڑ آئیں بلکہ میں بھی چلوں گی میں نے ان کے گلے لگ کر کہا تو وہ مسکرانے لگیں۔

بچپن کی شامیں میں کیسے بھول سکتی تھی ۔۔۔جب ہم سب دادی جان کے سادہ سے گھر کے صحن میں کھڑے ھوتے ۔دادی جان ہر طاق پر دیا رکھتیں ۔۔۔ شام کا دھندلکا ۔۔۔۔جلتے چراغ ۔۔ان سے اٹھتا ہلکا سا دھواں ۔۔ کیا منظر ھوتا ۔۔۔کبھی احساس ہی نہ ھوا ۔۔یہاں بجلی نہیں ھے ۔۔۔۔۔۔میں تو اکثر چاند نکلنے کا انتظار کرتی اور جب وہ نظر آتا تو دل ہی دل میں کہتی ۔۔۔ارے جناب آپ میری دادی جان کے چراغوں کا مقابلہ نہیں کر سکتے ۔

’’کیا سوچ رہی میری بیٹی‘‘ ۔۔۔۔۔دادی کی آواز مجھے حال میں لے آئی ۔

دادی جان ،بابا نہیں آئے ۔۔۔لو آگئے انھوں نے گیٹ کی طرف دیکھا ۔۔۔بابا آ رہے تھے یا میری کل کائنات آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔کونسی شام ،کیسی شام ۔وہاں تو بابا کے وجود کی خوشبو تھی،ہر طرف روشنی تھی تب شام کا مطلب بس اتنا ہی تھا ۔۔۔۔۔۔۔دادی چلی جاتیں ۔۔۔۔۔کچھ ہی عرصہ بعد بابا ان کو لے آتے وجہ کبھی نہیں بتائی ۔۔۔۔ایک دن ان کا ہاتھ پکڑ کر روتے ھوئے کہہ رہے تھے اماں اب آپ ضد نہیں کریں گی دیکھیں تو سہی کس بےرحمی سے آپ کا ہاتھ پکڑا نیل پڑ گیا ۔۔۔۔بابا کس نے ایسا کیا ۔۔۔شاید دونوں ہی چونکے تھے ۔۔۔۔۔وہ ۔۔ادھر آؤ اماں نے مجھے اپنی طرف کھینچا پہلے بتائیں ۔۔۔۔۔۔۔ میں ضدی تو تھی ہی مگر دادی اور بابا روئیں یہ برداشت نہیں کر سکتی تھی۔۔۔۔۔۔چچا نے جھگڑا کیا ھے ۔۔۔۔اماں نے نظریں جھکا لیں ۔۔۔کیا میری تو آنکھیں پھٹ گئیں ۔۔۔۔اتنے بڑے ھو کر وہ دادی سے لڑے ۔۔میری آواز بھیگ گئی ۔۔۔۔۔۔بابا اب دادی جان کہیں نہیں جائیں گی ۔۔۔۔۔بابا آپ باہر فرنچ ونڈوز میں طاق بنوا دیں ۔۔میری دادی جان یہاں چراغ جلائیں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بابا نے میرا ماتھا چوما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اٹھ کر چلے گئے ۔۔۔۔۔۔۔میری تو عید ھو گئ ۔۔۔۔۔۔۔دادی جان کے ساتھ باہر سونا۔۔۔۔چاند کو تکتے تکتے سونا ۔۔۔۔تہجد ھو جاتی تو دادی چپکے سے اٹھ جاتیں ۔۔۔۔یہاں تک فجر ھو جاتی ۔۔۔وضو کر کے میں ان کے ساتھ ہی کھڑی ھو جاتی ۔۔۔۔۔۔صبح کا ناشتہ دادی کے ساتھ ؟ اسکول میں دادی کی باتیں ۔۔۔۔۔۔کھلتا گلاب ہیں جی میری دادی ۔۔۔۔ھوں گی ہم تو بہت تنگ ہیں اپنی دادی سے اماں کو جو تنگ کرتیں ہیں ۔۔ایک کلاس فیلو تنک کر کہتی ؟ بڑوں کے بارے میں ادب سے بات کرنی چاہیے۔۔۔۔۔بس اتنا ہی کہتی مگر میری بات بہت کم لوگوں کو سمجھ آتی ۔

ہاں تو میں کہہ رہی تھی ۔۔۔۔مجھے تب شامیں بڑی البیلی لگتی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔مگر ایک دن بابا چلے گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اماں کو سکتہ سا ھو گیا ۔۔میری بہنیں رو رہی تھیں ۔۔۔۔۔ میری دنیا جا رہی تھی ۔۔۔۔ میرے بابا مگر میں مڑ مڑ کر دادی کو دیکھتی ۔۔۔۔۔۔۔وہ بس اتنا کہتیں نجانے کب ،کہاں مجھ سے دعا قضا ھو گئی تُو چلا گیا میرے بچے ۔۔۔۔۔۔۔اماں کہتیں ۔۔دادی کے ساتھ رہو بیٹا ان کا دکھ ہم سے کہیں زیادہ ھے ۔۔۔۔ اور مجھے لگتا تھا کہ سوائے دادی کے دل بہلانے کے مجھے کوئی اور کام نہیں ھے ۔۔۔۔ مگر چھ ماہ بعد میری دادی بھی چلی گئیں ۔۔میں پہلی بار چلا چلا کر روئی مجھے دادی نہیں بابا یاد آ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔میں دادی کو نہیں خود کو بھی بہلا رہی تھی جب وہ چلی گیئں تو سوائے بابا کے کچھ یاد نہ آیا ۔اور پھر پتہ چلا ۔۔۔ شامیں اداس ھوتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔شامیں روتی بھی ہیں ۔۔میں سر شام بابا کا انتظار کرتی تھی ۔میری آنکھیں گیٹ پر لگی رہتیں،ایک ہاتھ میرے شانے پر محسوس ھوتا ۔۔۔۔ پتر اب انتظار نہ کیا کر ۔۔۔۔۔دادی میں ان کے ساتھ لگ کر بغیر آواز رویا کرتی ۔۔۔۔۔۔دادی میرا سہارا تھیں ۔۔۔۔۔۔میرے بابا ان کا عکس تھے ۔۔۔۔۔جب وہ چلی گیئں تب سے شام اداس ھے ۔۔ میں نے اسے کبھی مسکراتے نہیں دیکھا ۔۔۔۔

You might also like
Loading...